100شہید فلسطینی بچوں کا نوحہ...!!!

100شہید فلسطینی بچوں کا نوحہ...!!!
100شہید فلسطینی بچوں کا نوحہ...!!!

  

"ناجائز صہیونی ریاست "کے "خونخوار وزیر اعظم" نیتن یاہو "پیغمبروں کی سر زمین" پر حالیہ حملوں کے دوران 100بے گناہ فلسطینی بچوں کا خون پی گئے.... 11دنوں میں اتنی تعداد میں "ننھی شہادتوں" پر شرق تا غرب ،ہر آنکھ اشکبار ہے کہ کتنی  مائوں کی گودیں اجڑ گئیں اور کتنی بہنوں کے بھائی چھن گئے...!!!

خون سے غسل کرتے فلسطینی بچوں کو دیکھ کر افغانی،عراقی اور شامی بچے بھی یاد آگئے کہ ان سب کا جرم ایک ہی ہے کہ وہ مسلمان گھرانوں میں پیدا ہوئے ہیں....کابل سے بغداد.....دمشق سے غزہ ،کلمہ گو بچوں کے لیے کربلا ہی کربلا  ہے....کئی برس پہلے فیض احمد فیض نے" فلسطینی بچے کے لیے لوری"  لکھی تو  عہد حاضر کے بڑے پنجابی شاعر بابا نجمی بھی صہیونی مظالم پر لعنت بھیجنے کے لیے مجبور ہوگئے...

کسی بھی معاشرے کے خوش فکر شاعر بڑے ہی قابل عزت ہوتے ہیں .....اتنے عالی قدر کہ ساڑھے چودہ سو سال پہلے بھی،رسول کریم ﷺجناب حسان بن ثابت رضی اللہ عنہ کو مسند پر بٹھا کر گل ہائے عقیدت سماعت فرماتے... ...پیر کامل سید علی ہجویری رحمتہ اللہ علیہ اپنی معرکتہ الآرا کتاب" کشف المحجوب" میں لکھتے ہیں"پیغمبرﷺ نے اشعار سنے....صحابہ کرام رضی اللہ عنہم بھی اشعار سنتے اور کہتے... آنحصور ﷺ نے فرمایا کہ بعض اشعار حکمت ہوتے ہیں...شعر کا مضمون اچھا ہوتو شعر اچھا ہے اور برا ہوتو شعر برا ہے...

فلسطین ،افغانستان،عراق ہو یا شام،کوئی صاحب اولاد ہی مظلوم بچوں کا دکھڑا لکھ سکتا ہے ...کسی فرعون صفت سنگدل کو کیا علم کہ بچے کتنے دل کش ہوتے ہیں؟؟؟گذشتہ کالم میں فیض کی" فلسطینی بچے کیلیے لوری "آپ پڑھ چکے....اب بابا نجمی کا کوئی بیس سال پہلے "افغانی بالاں داخط "پڑھیے ،پھر اسرائیلی دہشت گردی کیخلاف نئی نظم ملاحظہ فرمائیں... بابا جی کے اس " خط "میں فیض کی  "لوری" کی بازگشت سنائی دیتی ہے ...شاید اس کی وجہ فلسطینی اور افغانی بچوں کے درد میں مماثلت ہے....!!!بابا نجمی لکھتے ہیں:

آل اولاداں والیو لوکو

اچیاں محلاں دے وسنیکو

ساری دنیا دے پردھانو

سچے ہیرے جیہے انسانو 

دکھی دنیا دے ہمدردو

سارے جگ دے اللہ لوکو

دانشورو،وکیلو،ججو

ساڈے دل دا دکھ سنو

روندی ساڈی ککھ سنو

دل تے لکھو صدما ساڈا

رل کے لڑو مقدما ساڈا

اسیں نمانے آہلنیاں چوں

ڈگے نہیں ساں

کڈھے گئے ساں

اکھان کھلن نالوں پہلاں

دکھاں دے کھوہ سٹے گئے ساں

کتھے کیہڑے جمن والے 

رب ای جانے

بم دھماکے یاد نیں سانوں

اپنے فاقے یاد نیں سانوں

ساہواں باجھوں ساڈے پلے

کجھ وی نہیں جے

اتے تھلے کجھ وی نہیں جے

ساڈے نالوں چنگے کتے 

جیہڑے اپنی جوہ اچ ستے

گندگی والے ڈھیراں اتوں

پھڑ پھڑ تہاڈے جھوٹھے ٹکر

کیہڑے جرم چ کھانے پئے نیں

سانوں تہاڈے بالاں والے

پاٹے لتھے پانے پئے نیں

فر کوئی سنیا طاقت والا 

وچ نشے دے

اپنے نال اتحادی لے کے

ست سمندروں پار آیا

بیڑے وچ برود لیایا

لمیاں فوجاں لے کے چڑھیا

دھکو دھکی ساڈی

دھرتی اندر وڑیا

ساڈے شہر اجاڑی جاوے

جھگے جھگیاں ساڑی جاوے

بمباں دے نال ساڈی جوہ دا

چپا چپا زخمی کیتا

مستقبل دا لہو اے پیتا

ساڈے کولوں ہتھ جڑالو

سانوں اپنے پیر پھڑا لو

اگے ود کے ڈکو ایہنوں 

ساڈی جوہ چوں کڈھو ایہنوں

اسیں وی اپنے گھر نوں جائیے

اجڑے اپنے شہر وسائیے

 بابا نجمی "لعنت اسرائیل دے اتے"کے عنوان سے لکھتے ہیں:

ساری دنیا لعنت پاوے اسرائیل دے اتے

نفرت بھریاں مہراں لاوے اسرائیل دے اتے

سجدے ڈگے لوکاں اتے کیتی اے بمباری

کوئی اسمانوں آفت اوے اسرائیل دے اتے

ظلماں والیاں سبھے حداں ظالم ٹپ کھلوتا

کوئی تے حق دا ڈھول وجاوے اسرائیل دے اتے

جگ دے نقشے اتوں ایہدا لبھے نہ سرناواں

ویلا انج دا نھیر مچاوے اسرائیل دے اتے

ایہنوں پان چڑھی امریکی ایہنے سدھ نہیں ہونا

جگ دا وارث قہر کماوے اسرائیل دےاتے

سارے جگ دا اک اک بندہ اپنی جوہ دے تھانے 

اج مقدمہ درج کراوے اسرائیل دے اتے

جیہڑا کجھ وی کر نہیں سکداانج کرے او بابا

نندیا والے تیر چلاوے اسرائیل دے اتے

غزہ سے غزنی تک،آتش و آہن کی بارش میں جھلستے،سسکتے بلکتے بد قسمت بچوں کا المیہ بھی ایک ایسا ہے اور فیض سے بابا نجمی تک ،ہر زمانے کے شاعر کا دکھ بھی ایک ایسا کہ وہ امن اور احترام انسانیت کی بات کرتے ہیں.....!!!!

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

مزید :

بلاگ -