ڈاکٹر شیریں مزاری کی صاحبزادی نے گرفتاری کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد "مرد اہلکاروں کی طرف سے دھکے دے کر گاڑی میں بٹھا کر لے جانے" کے بیان کی وضاحت کردی

ڈاکٹر شیریں مزاری کی صاحبزادی نے گرفتاری کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد "مرد ...
ڈاکٹر شیریں مزاری کی صاحبزادی نے گرفتاری کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد

  

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور سابق وفاقی وزیر شیریں مزاری کی صاحبزادی نے والدہ کی گرفتاری کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد  اپنے پہلے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ مجھے  اطلاع دینے والوں نے کہا تھا کہ انہیں مرد پولیس اہلکار لے کر گئے ہیں جس کی بنیاد پر میں نے بیان دیا تھا، کاش گرفتاری کی ویڈیو پہلے دیکھ لیتی ۔

اپنے ایک ٹوئیٹ میں ایمان زینب مزاری نے لکھا کہ "ان لوگوں کے لیے جو مجھ پر جھوٹ بولنے کا الزام لگا رہے ہیں،کاش یہ ویڈیو میں نے پہلے دیکھی ہوتی، میں نے وہ بات ان اطلاعات کی بنیاد پر کی تھی جو ان لوگوں نے دی تھی جن کا کہنا تھاکہ انہوں نے اس اقدام کو دیکھا تھا"۔

ڈاکٹر شیریں مزاری کی بیٹی نے کہا کہ میرے ہمسایے کے ڈرائیور نے آکر مجھے والدہ کی گرفتاری کی اطلاع دی  اور انہوں نے  جیسا بتایا میں نے ویسا ہی کہا ۔ 

 خیال رہے کہ   شیریں مزاری کی صاحبزادی ایمان مزاری نے کہا تھا  کہ مرد پولیس اہلکاروں نے میری ماں کو مارا پیٹا، وہ میری ماں کو مارتے ہوئے ساتھ لے گئے ، صرف مجھے یہ بتایا گیاہے کہ گرفتارکرنے والے اینٹی کرپشن ونگ لاہور کے اہلکار ہیں ۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایمان مزاری کا کہنا تھا کہ خاندان کو بتائے بغیر گرفتار کیا گیا ،یہ گرفتاری نہیں  اغوا ہے میری والدہ کو اغوا کیا گیا ہے ،یہ حکومت ایسی حرکتیں کرے گی تو ٰمیں ان کے پیچھے تک  آؤں گی ، میری والدہ کو کچھ ہوا تو میں ان کو چھوڑوں گی نہیں ۔

مزید :

قومی -