میاں بیوی نے مذاق میں بچوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کرائے تو 12 سالہ بیٹے بارے ایسا انکشاف کہ بڑا جھٹکا لگ گیا

میاں بیوی نے مذاق میں بچوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کرائے تو 12 سالہ بیٹے بارے ایسا ...
میاں بیوی نے مذاق میں بچوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کرائے تو 12 سالہ بیٹے بارے ایسا انکشاف کہ بڑا جھٹکا لگ گیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں ایک میاں بیوی نے مذاق مذاق میں اپنے بچوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کرا ڈالے جن کے نتائج میں ان کے ایک 12سالہ بیٹے کے بارے میں ایسا انکشاف ہوا کہ دونوں کے پیروں تلے زمین نکل گئی۔ ڈیلی سٹار کے مطا بق47سالہ ڈونا جانسن اور اس کے شوہر کو ڈی این اے ٹیسٹ کے نتائج میں علم ہوا کہ جس بیٹے کو وہ 12سال سے اپنا بیٹا سمجھ کر پال پوس رہے تھے، وہ دراصل ان کا بیٹا ہی نہیں تھا۔

ڈونا اور اس کے شوہر کے دو بیٹے تھے۔ بڑے کی عمر 18سال تھی اور وہ انہی کا بیٹا ثابت ہوا تھا تاہم چھوٹا بیٹا ٹم ان کا بیٹا نہیں تھا۔ تحقیق کرنے پر معلوم ہوا کہ آئی وی ایف پروسیجر کے دوران ڈاکٹروں نے کسی اور جوڑے کا ایمبریو ڈونا کے پیٹ میں رکھ دیا تھا، جسے اس نے جنم دیا۔ 

ڈونا اور اس کے شوہر کے بیضے اور سپرمز سے جو ایمبریو تیار کیا گیا تھا وہ کسی اور خاتون کے جسم میں رکھ دیا گیا تھا۔ اس خاتون کی شناخت کیلی کے نام سے ہوئی۔ کیلی اور اس کا شوہر ڈیون مک نیل 8میل کے فاصلے پر رہائش پذیر تھے اور وہ ڈونا اور اس کے شوہر کے بیٹے کو اپنا بیٹا سمجھ کر اس کی پرورش کر رہے تھے۔

امریکی ریاست کولوریڈو کی رہائشی ڈونا اور اس کے شوہر نے جب انہیں اس حوالے سے آگاہ کیا تو انہوں نے بھی ڈی این اے ٹیسٹ کرائے جس میں ڈونا اور اس کے شوہر کی بات درست ثابت ہو گئی۔ اب دونوں جوڑوں نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ اپنے انہی بچوں کے ساتھ رہیں گے جنہیں دونوں خواتین نے جنم دیا اور اصلی بیٹوں کی حوالگی کے لیے کوئی قانونی چارہ جوئی نہیں کریں گے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -