جناح ہسپتال میں نرسوں کی دوسرے روز بھی ہڑتال آ پریشن ملتوی

جناح ہسپتال میں نرسوں کی دوسرے روز بھی ہڑتال آ پریشن ملتوی

            لاہور(جنرل رپورٹر)جناح ہسپتال کی نرسوں نے اپنی ساتھی نرسوں کوآئی سی یوکے ڈاکٹروںکی طرف سے مبینہ ہراساں کرنے کے خلاف گزشتہ روز بھی ہڑتال کی اور ایم ایس کے دفتر کے سامنے مستقل دھرنا دے دیا اس دوران محکمہ صحت نے انہیں ڈی جی ہیلتھ کے دفتر میں آکر مذاکرات کرنے کی پیشکش کی نرسوں نے یہ پیشکش مسترد کر دی اور مطالبہ کیا کہ ہم مذاکرات سے قبل نرسوں کو ہراساں کرنے والے ڈاکٹر اصغر گجر سمیت دیگر کو ملازمت سے بر طرف کیا جائے ورنہ دھرنا جاری رکھا جائے گانرسوں کے احتجاج کے بعد ہسپتال انتظامیہ کو ہسپتال چلانا مشکل ہو گیاگزشتہ روز ہڑتال کے باعث مریضوں کے داخلے بھی نہ ہو سکے اور آپریشن تھیٹروں میں 80فیصد مریضوں کے آپریشن ملتوی کر دیئے گئے جبکہ مریض تڑپتے رہے واضح رہے کہ نرسوں کی ہڑتال گزشتہ دو دنوں سے جاری ہے۔ جناح ہسپتال کی نرسوں نے آئی سی یو میں فرائض سر انجام دینے والی دو نرسوں کو ڈاکٹروں کی طرف سے ہراساں کرنے کے الزام میں گزشتہ روز بھی ہڑتال کر دی دوپہر کے بعد نرسیںمیڈیکل سپرنٹنڈنٹ کے دفتر کے باہر جمع ہو گئیں جہاں انہوں نے دھرنا دیتے ہوئے ڈاکٹروں کیخلاف نعرے بازی کی، جلوس کی شکل میں انہوں نے ہسپتال کا چکر لگایا اور نعرے بازی کی نرسوں کا مطالبہ تھا کہ اگر ذمہ داروں کو معطل نہ کیا گیا تو وہ غیر معینہ مدت کےلئے ہڑتال کر کے ایوان وزیر اعلیٰ کیطرف مارچ کریں گی اس حوالے سے آئی سی یو کے انچار ج کا کہنا ہے کہ معاملے کی تحقیقات ہو رہی ہیں جو بھی ذمہ دار پایا گیا قانون کیمطابق سزا دی جائے گی جبکہ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ انہوں نے کسی نرس کو ہراساں نہیں کیا ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...