نئی نویلی بھارتی دلہن کو اپنے ہی باپ نے جلاکر راکھ کر دیا

نئی نویلی بھارتی دلہن کو اپنے ہی باپ نے جلاکر راکھ کر دیا
نئی نویلی بھارتی دلہن کو اپنے ہی باپ نے جلاکر راکھ کر دیا

نیودہلی (مانیٹرنگ ڈیسک) غیرت کے نام پر قتل وہ قبیح جرم ہے کہ جس کے مرتکب مجرم نہ صرف انسانی جان لے لیتے ہیں بلکہ اپنے شیطانی فعل سے مذہب ،اخلاقیات اور ریاست کے قوانین کا بھی بدترین مذاق اڑاتے ہیں۔ ایک ایسا ہی گھناﺅنا جرم بھارت میں سرزد ہوا ہے جس میں والدین نے اپنی نوجوان بیٹی کو پسند کی شادی کرنے پر تشدد کرکے قتل کیا اور پھر ناقابل یقین سفاکی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اس کی لاش کو آگ لگادی۔

بھارتی جادو گر نیوں نے باپ کو بیٹے کے سامنے زندہ جلا ڈالا

اکیس سالہ بھاونا بھارت کے مشہور تعلیمی ادارے ونیکا تسورا کالج میں سنسکرت زبان کی طالبہ تھی اور اس نے اپنی پسند سے ابھیشیک نامی نوجوان سے شادی کی تھی۔ اس کے بددماغ والدین کو اس بات کا رنج تھا کہ بیٹی نے یا دو ذات کی لڑکی ہونے کے باوجود پنجابی لڑکے سے شادی کی تھی، جسے وہ اپنی شان کے خلاف سمجھتے تھے۔ جھوٹی انا کے پجارےوں نے اپنی لخت جگر کو دھوکے سے گھر بلایا اور پھر باپ اور چچا نے بدترین تشدد کرکے اسے موت کے گھاٹ اتاردیا۔ دہلی میں بیٹی کو قتل کرنے کے بعد وہ اس کی لاش کو ریاست راجھستان میں اپنے گاﺅں لے گئے اور وہاں اسے شعلوں کی نظر کردیا۔

لڑکی کے خاوند کی شکایت پر تفتیش کی گئی تو بدبخت والدین جگ موہن اور ساوتری نے اپنے بھیانک جرم کا اعتراف کرلیا۔ پولیس نے انہیں گرفتار کرلیا ہے جبکہ بھتیجی کی دردناک موت میں برابر کا حصہ ڈالنے والے درندہ صفت چچا کی تلاش جاری ہے۔

 

 

مزید : انسانی حقوق

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...