برطانیہ میں پاکستانی ٹیکسی ڈرائیورکا شرمناک فعل،قوم شرمندہ

برطانیہ میں پاکستانی ٹیکسی ڈرائیورکا شرمناک فعل،قوم شرمندہ
برطانیہ میں پاکستانی ٹیکسی ڈرائیورکا شرمناک فعل،قوم شرمندہ

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لندن (نیوز ڈیسک) برطانیہ میں نوعمر لڑکیوں کی عصمت دری کرنے والے ایشیائی باشندوں کے گینگ کی گرفتاری کے بعد اب ایک اور شرمناک واقعہ خبروں کا موضوع بن گیا ہے۔ چار افراد، 42 سالہ تمثیل ورک، 31 سالہ نجم السعید، 21 سالہ وقار اختر اور 38 سالہ آزاد راجہ کو ایک برطانوی خاتون کے ساتھ اجتماعی زیادتی کے جرم میں سترہ سترہ سال قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔

سابق ملکہ برطانیہ کا اپنے ملازم کے ساتھ تعلقات منظر عام پر

عدالت میں بتائی گئی تفصیلات سے معلوم ہوا کہ تمثیل ورک ٹیکسی ڈرائیور ہے اور اس نے نشے میں دھت ایک نوجوان استانی کو بے بس دیکھ کر اپنی کار میں ڈال لیا اور اپنی ہوس کا نشانہ بناتا رہا۔ بعد ازاں اس نے اپنے تین دوستوں سے رابطہ کیا اور انہیں بھی گناہ میں شرکت کی دعوت دی۔

یہ چاروں مدہوش خاتون کو لیڈز شہر سے بریڈ فورڈ لے گئے اور ایک پارک کے بینچ پر اسے زیادتی کا نشانہ بناتے رہے۔ مجرم وقار اختر نے خاتون کے ہوش میں آنے پر اسے فخریہ طور پر بتایا کہ وہ اس کی عزت پامال کرچکا ہے جبکہ اس وقت اس کا چچا آزاد راجا شیطانی فعل میں مصروف تھا۔ تین مجرم پولیس کی گرفت میں ہیں جبکہ وقار اختر تاحال مفرور ہے۔

 

مزید : جرم و انصاف