کینیڈین جوڑے نے اپنی شادی کی تقریب منسوخ کردی، وجہ ایسی کہ جان کر آپ بھی داد دینے پر مجبور ہوجائیں گے

کینیڈین جوڑے نے اپنی شادی کی تقریب منسوخ کردی، وجہ ایسی کہ جان کر آپ بھی داد ...
کینیڈین جوڑے نے اپنی شادی کی تقریب منسوخ کردی، وجہ ایسی کہ جان کر آپ بھی داد دینے پر مجبور ہوجائیں گے

  

اوٹاوا (نیوز ڈیسک) مسلمانان عالم تاریخ کے عجب دور سے گرزرہے ہیں کہ ایک طرف تو اسلام کا نعرہ لگانے والے ہی اپنے ہم وطن مسلمانوں کو غریب الوطنی پر مجبور کر رہے ہیں تو دوسری طرف غیر مسلم کہلانے والے یورپی ان بے سروپاپناہ گزینوں کے لئے اپنی بانہیں پھیلارہے ہیں۔

کینیڈا سے تعلق رکھنے والا ایک نوجوان جوڑا بھی ایسی ہی مثال ہے کہ جنہوں نے اپنی شادی کے لئے جمع کئے گئے لاکھوں ڈالر ایک بے گھر شامی پناہ گزین فیملی کو گھر دینے کے لئے وقف کردئیے اور شان و شوکت سے منعقد ہونے والی شادی کو ایک انتہائی سادہ تقریب میں بدل دیا۔ بی بی سی کے مطابق سمانتھا جیکسن اور فارزین یوسفیان کا کہنا ہے کہ انہوں نے جب ننھے شامی پناہ گزین ایلان کردی کی سمندر میں ڈوب کر ہلاک ہونے کی خبر سنی تو اپنی شادی کے لئے جمع کی گئی تمام رقم کو شامی پناہ گزینوں کے لئے وقف کرنے کا فیصلہ کرلیا تھا۔

مزید جانئے: نوجوان بیٹی کو شرمناک عادت سے نجات دلوانے والے مرد کیلئے 12 ارب روپے انعام کا اعلان کرنے والا ارب پتی

انہوں نے ناصرف اپنی جمع پونجی شامی پناہ گزینوں پر نچھاور کردی بلکہ اپنی شادی میں شرکت کرنے والے تمام مہمانوں سے بھی درخواست کی کہ وہ انہیں تحائف دینے کی بجائے شامی پناہ گزینوں کے لئے عطیات جمع کروادیں۔ سمانتھا جیکسن نے برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ وہ ہر وقت یہی سوچتی رہتی ہیں کہ اپنے ہنستے بستے گھر چھوڑنے کا دردناک فیصلہ ان پنگاہ گزینوںنے کیسے کیا ہوگا اور دیار غیر میں چھت سے محروم ان کے بچے زندگی کیسے گزار رہے ہوں گے۔ وہ کہتی ہیں کہ انہی خیالات نے انہیں مجبور کیا کہ وہ اپنی خوشیوں کو ان پناہ گزینوں کے لئے قربان کردیں۔

سمانتھا اور ان کے شوہر نے اب تک اپنے وسائل سے 11 ہزار پاﺅنڈ (تقریباً 18 لاکھ پاکستانی روپے ) سے زائد رقم جمع کی ہے، جبکہ وہ ابھی مزید 13 ہزار پاﺅنڈ (تقریباً 20 لاکھ پاکستانی روپے) کے عطیات جمع کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس