سانحہ 12 مئی میں ملوث ٹارگٹ کلر شکیل بچہ کا انکشافات سے بھرا بیان سامنے آگیا

سانحہ 12 مئی میں ملوث ٹارگٹ کلر شکیل بچہ کا انکشافات سے بھرا بیان سامنے آگیا
سانحہ 12 مئی میں ملوث ٹارگٹ کلر شکیل بچہ کا انکشافات سے بھرا بیان سامنے آگیا

  

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک)سانحہ 12 مئی 2007 میں ملوث ٹارگٹ کلر شکیل بچہ کا انکشافات سے بھرا بیان سامنے آگیا، 3 افراد کو قتل اور 46 افراد کو زخمی کرنے کا اعتراف کرلیا۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق مبینہ ٹاو¿ن سے گرفتار ہونے والے ٹارگٹ کلر شکیل بچہ نے اپنے اعترافی بیان میں کہا ہے کہ اس نے 12 مئی 2007 کو تین افراد کو قتل اور 46 کو زخمی کیا تھا جبکہ اس نے لیاقت آباد میں ہوٹل پر فائرنگ کرکے تین افراد کو زخمی کرنے کا بھی اعتراف کیا ہے۔ شکیل بچہ نے انکشاف کیا ہے کہ دبئی سے عمران ماموں ٹارگٹ کلرز کی ٹیم کو سنبھالتا ہے جبکہ لاہور سے سمیع بلو ٹارگٹ کلنگ کا حکم دیتا ہے۔ اس نے بتایا کہ ہمیں ہڑتال کے دوران دکانیں بند نہ کرنے پر فائرنگ کا حکم ملتا تھا۔

واضح رہے کہ 12 مئی 2007 کو اس وقت کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی آمد پر کراچی میں بڑے پیمانے پر وکلا کا قتل عام کیا گیا تھا ۔

مزید : کراچی