خواجہ سرا ہونا جرم نہیں ،اسلام میں ان کے بھی وہی حقوق ہیں جو معاشرے میں ہمارے ہیں:سینیٹر حافظ حمد اللہ

خواجہ سرا ہونا جرم نہیں ،اسلام میں ان کے بھی وہی حقوق ہیں جو معاشرے میں ہمارے ...
خواجہ سرا ہونا جرم نہیں ،اسلام میں ان کے بھی وہی حقوق ہیں جو معاشرے میں ہمارے ہیں:سینیٹر حافظ حمد اللہ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد( مانیٹرنگ ڈیسک)سعودی حکومت کی طرف سے خواجہ  سراؤں  پر عمرے کی پابندی کے اعلان کے بعد  جمعیت علمائے اسلام (ف) کے رہنما سینیٹر حاٖفظ حمد اللہ نے خواجہ سراؤں کے حقوق کیلئے آواز بلند کردی اور سینیٹ میں کمیٹی تشکیل دینے کی تجویز پیش کرتے ہوئے انہوں  نے کہا کہ اس جنس کے ساتھ اچھوتوں والا سلوک ہوتا ہے اسلام میں خواجہ سراؤں کے بھی وہی حقوق ہیں جو ہمارے ہیں، خواجہ سرا ہونا کوئی جرم نہیں۔

مزید پڑھیں:قائمہ کمیٹی سینیٹ نے پاک ترک سکولوں کے اساتذہ کے ویزے منسوخ اور سکولوں کی بندش پروزارت داخلہ سے تفصیلی رپورٹ مانگ لی

نجی ٹی وی کے مطابق جمعیت علمائے اسلام ف کے رہنما سینیٹر حافظ حمد اللہ نے خواجہ سراؤں کے حقوق کیلئے آواز بلند کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسلام میں خواجہ سراؤں کے بھی وہی حقوق ہیں جو ہم سب کے ہیں،بہت سارے خواجہ سرا ایسے ہیں جن کے علاج کرنے کے بعد یا تو وہ مکمل مرد بن سکتے ہیں یا پھر عورت ، معاشرے میں ان سے اچھوتوں والا سلوک ہوتا ہے جو انتہائی غیر مناسب ہے، خواجہ سرا ہونا کوئی جرم نہیں ہے اور کوئی بھی پیدائشی خواجہ سرا نہیں ہوتا۔دوسری طرف جے یو آئی ف کے رہنما کی تجویز کو سراہتے ہوئے چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے کہا کہ آپ نے ایک اہم نقطہ اٹھایا ہے،خواجہ سراؤں کے حقوق کا تحفظ حکومت کی ذمہ داری ہے ساتھ ہی انہوں نے معاملہ پسماندہ طبقات سے متعلق کمیٹی کے سپرد کردیا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل  سعودی حکومت نے خواجہ سراﺅں پر عمرہ کی ادائیگی پر پابندی عائد کر تے ہوئے کہا تھا آئندہ  خواجہ سراﺅں کو عمرے کی ادائیگی کی اجازت نہیں دی جائے گی ، اس سلسلے میں سعودی حکام نے تمام ٹریول ایجنٹس کو خواجہ سراﺅں کے پاسپورٹ وصول نہ کرنے کی بھی ہدایت کر دی تھی جبکہ نجی ٹی وی ’’جیو نیوز ‘‘کا کہنا ہے  کہ خواجہ سراؤں کے عمرہ کرنے پر پابندی کے حوالے سے پابندی کا باقاعدہ نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے ٹریول ایجنٹس ایسوسی ایشن آف پاکستان کو بھجوادیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ آئندہ خواجہ سراؤں کو عمرہ کیلئے ویزے جاری نہ کیے جائیں۔

مزید :

اسلام آباد -