اراضی ریکارڈ سنٹر ملازمین کی ہڑتال‘ متبادل سٹاف تعینات کرنیکا فیصلہ

  اراضی ریکارڈ سنٹر ملازمین کی ہڑتال‘ متبادل سٹاف تعینات کرنیکا فیصلہ

  



ملتان‘ میلسی(نیوز رپورٹر‘ سپیشل رپورٹر ڈپٹی کمشنر ملتان عامرخٹک نے اراضی ریکارڈ سنٹر کے ملازمین کی ہڑتال کا نوٹس لے لیاہے اورعوام کی پریشانی کے پیش نظر اراضی ریکارڈ سنٹرز پر متبادل سٹاف تعینات کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سلسلے میں ضلع کے اراضی ریکارڈ سنٹرز میں خدمات انجام دینے کے لیے مختلف محکموں کے 35کمپیوٹرآپریٹرز کو طلب کر لیا گیا ہے۔محکمہ تعلیم سے 21 آئی ٹی ایس ایس ٹیز اور (بقیہ نمبر37صفحہ12پر)

کمپیوٹر سائنس کے ایس ایس ٹیز اساتذہ کی خدمات حاصل کر لی گئی ہیں۔محکمہ صحت کے تین اور محکمہ سول ڈیفنس کا ایک کمپیوٹر آپریٹراور دیگر کمپیوٹر آپریٹرز کا تعلق ڈپٹی کمشنر اور اسسٹنٹ کمشنرز کے دفاتر سے ہے۔تمام کمپیوٹر آپریٹرز کو کریش پروگرام کے تحت ٹریننگ دی جائے گی،تربیت کے بعد کمپیوٹر آپریٹرز ضلع کے 6 اراضی ریکارڈ سنٹر میں تعینات کیے جائیں گے۔ ڈپٹی کمشنر عامر خٹک کا کہنا ہے کہ ہڑتال سے ریونیو ڈیپارٹمنٹ کا کام متاثر ہو رہا ہے۔ملازمین کی ہڑتال کے باعث سنٹرز پر آنے والے سائلین کو مسائل کا سامنا ہے۔انہوں نے کہا ہے کہ عوام کو ہڑتالی ملازمین کے رحم وکرم پر نہیں چھوڑا جا سکتا،اراضی ریکارڈ سنٹرز پر جلد متبادل سٹاف تعینات کر دیا جائے گا۔ اراضی لینڈ ریکارڈ سنٹر میلسی کے ملازمین کی جانب سے مسلسل ہڑتال کے باعث تحصیل بھر کے ہزاروں سائلین شدید مشکلات کا شکار ہو گئے کمپیوٹر سنٹر کو تالے لگنے اور کام ٹھپ ہونے کے باعث شہریوں اور کاشتکاروں کے روزمرہ کے کام رک گئے اس سلسلے میں تحصیل بھر کے نواحی دیہاتوں سے روزانہ سینکڑوں کی تعداد میں لوگ فرد ملکیت اور اراضی کی خرید و فروخت کے سلسلے میں اراضی لینڈ ریکارڈ سنٹر میں آ کر بند دفاتر کے باعث مایوس واپس لوٹ جاتے ہیں اور کام ٹھپ ہونے کی وجہ سے سرکاری خزانے کو بھی روزانہ کی بنیاد پر لاکھوں روپے کے ریونیو کا نقصان ہو رہا ہے متاثرہ شہریوں محمد ندیم، احمد علی، محمد قاسم، فیروز احمد، نبیل احمد، اللہ بخش، دین محمد، اللہ وسایا، خان محمد اور دیگر نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ہڑتالی ملازمین کو فوری طور پر فارغ کر کے نئے افراد بھرتی کیئے جائیں اور فوری طور پر کمپیوٹر سنٹرز فعال بنائے جائیں۔

ہڑتال

مزید : ملتان صفحہ آخر