سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ، بی جے پی لیڈ رایس پی سنہاکے بیان کیخلاف مذمتی قرار داد منظور

    سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ، بی جے پی لیڈ رایس پی سنہاکے بیان کیخلاف مذمتی ...

  



اسلام آباد(آن لائن)سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ نے بی جے پی لیڈر و میجر جنرل ریٹائرڈ ایس پی سنہا کے بیان کیخلاف مذمتی قرار داد منظور کرلی۔ گزشتہ روزسینیٹر رحمان ملک کی زیرصدارت سینیٹ کی قائمہ کمیٹی داخلہ کا اجلاس ہوا کمیٹی میں بی جے پی لیڈر و میجر جنرل ریٹائرڈ ایس پی سنہا کے بیان کیخلاف مذمتی قرار داد منظور کر لی گئی۔رحمن ملک نے کہاکہ میجر جنرل ریٹائرڈ ایس پی سنہا کی غیر اخلاقی و غیر انسانی بیان کی شدید مذمت کرتے ہیں، میجر جنرل ریٹائرڈ ایس پی سہناکا بیان بی جے پی و بھارتی آرمی کے ذہنیت کی عکاسی کرتا ہے۔سینیٹر رحمان ملک نے کہاکہ اقوام متحدہ و انسانی حقوق کی تنظیمیں ریپ کو بطور جنگی ہتھیار استعمال کرنے کی وکالت پر ایس پی سنہا کیخلاف کارروائی کریں۔انہوں نے کہاکہ ایس پی سنہا کا بیان بھارتی افواج کی طرف سے کشمیرمیں خواتین کی آبروریزی کا ثبوت ہے، میں بارہا حکومت سے مطالبہ کرچکا ہوں کہ بھارت و مودی کیخلاف عالمی عدالتوں میں جائے۔سینیٹر رحمان ملک نے کہاکہ ہمیں گیمبیا کے وزیر قانون پر فخر کرتے ہیں کہ وہ روہینگیا میں مسلمانوں کی نسل کشی کیخلاف عالمی عدالت میں گیا، حکومت گیمبیا کے وزیر قانون کو پاکستان بلا کر تمغہ دے، حکومت مسئلہ کشمیر کو پہلی ترجیح رکھے تاکہ مظلوم کشمیریوں کو بھارتی مظالم سے آزادی مل جائے۔انہوں نے کہاکہ وقت ہے کہ مودی کو عالمی عدالتوں میں گھسیٹا جائے اور اسکا محاسبہ ہو۔اجلاس کے دور ان سینیٹ قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا پاراچنار میں پانچ سالہ ننھی گل سکینہ کی قتل کا سخت نوٹس لے لیا۔سینیٹر رحمان ملک نے ننھی گل سکینہ کے بد اخلاقی و قتل پر شدید دکھ و درد کا اظہار کیا۔ پانج سالہ گل سکینہ پاراچنار کے گاوں پیواڑ میں چند روز پہلے بد اخلاقی کے بعد مردہ حالت میں پائی گئی تھی، پانج سالہ گل سکینہ سکول گئی مگر واپس نہ آیا آئی جو بعد میں پانی کے تالاب میں پائی گئی۔سینیٹر رحمان ملک نے سیکرٹری داخلہ، حکومت خیبرپختونخواہ و آئی جی پولیس کو ملزمان کی فوری گرفتاری کے احکامات جاری کئے۔ رحمن ملک نے کہاکہ آئی جی پولیس خیبرپختونخواہ کمیٹی کو گل سکینہ کے بدا خلاقی و قتل پر جامع رپورٹ دس دنوں کے اندر کمیٹی کو جمع کر ائے۔ انہوں نے کہاکہ حکومت خیبرپختونخواہ ننھی بچی گل سکینہ کی قاتل کوفوری گرفتار کرکے کیفرکردار تک پہنچائے۔انہوں نے کہاکہ ننھے بچوں کیساتھ بدا خلاقی کرنے و قتل کرنے والے ظالموں کو سر عام پھانسی دی جائے تاکہ عبرت حاصل ہو۔ انہوں نے کہاکہ آئی جی پولیس خیبرپختونخواہ خود ننھی بچی گل سکینہ کی قتل کی تفتیش کی نگرانی کرے۔ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کے اجلاس کے دور ان پارلیمنٹرینز کے خلاف سوشل میڈیا پر مہم کا نوٹس لیا گیا،ایف آئی اے کو معاملے کی تحقیقات کا حکم دے دیا گیا،قائمہ کمیٹی نے ہر تین روز میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیدیا۔

سینیٹ کمیٹی

مزید : علاقائی