5 روسی سائنسدان دنیا کا خوفناک ترین ہتھیار بناتے ہوئے ہلاک

5 روسی سائنسدان دنیا کا خوفناک ترین ہتھیار بناتے ہوئے ہلاک
5 روسی سائنسدان دنیا کا خوفناک ترین ہتھیار بناتے ہوئے ہلاک

  



ماسکو(مانیٹرنگ ڈیسک) روس میں 5سائنسدان دنیا کا خطرناک ترین جنگی ہتھیار بناتے ہوئے ہلاک ہو گئے۔ میل آن لائن کے مطابق یہ واقعہ رواں سال کے آغاز میں پیش آیا تاہم گزشتہ روز ان سائنسدانوں کی بیواﺅں کو ایوارڈ دینے کی ایک تقریب ہوئی جس میں روسی صدر ولادی میر پیوٹن نے اس حوالے سے ان بیواﺅں کو بتایا اور یہ خبر منظرعام پر آئی۔ صدر پیوٹن نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سائنسدانوں کی بیواﺅں سے کہاکہ ”تمہارے شوہر ایک ایسا جدید ترین ہتھیار بناتے ہوئے ہلاک ہوئے جو دنیا میں بے مثال ہے اور اس جیسا ہتھیار دنیا میں کسی کے پاس نہیں ہے۔“

رپورٹ کے مطابق یہ سائنسدان ایک ایسا میزائل بنارہے تھے کہ جس کے مار کرنے کی کوئی حد ہی نہیں ہے۔ وہ دنیا میں کسی بھی جگہ پر مار کر سکتا ہے۔ سائنسدان یہ میزائل تیار کر چکے تھے اور اس کا تجربہ کرتے ہوئے ایک دھماکہ ہو گیا جس میں ان کی ہلاکت ہو گئی۔اس میزائل کو ’بیورویستنک ‘ (Burevestnik)کا نام دیا گیا ہے جسے نیٹو کے حکام ’سکائی فال‘ (Skyfall)کہہ کر پکارتے ہیں۔یہ میزائل روسی نیوکلیئر کمنی روستم (Rosatom)کے سائنسدان تیار کر رہے ہیں۔ تقریب میں صدر پیوٹن نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ”حادثے کے باوجود ہم اس میزائل کی تیاری پر کام جاری رکھیں گے۔“

مزید : بین الاقوامی