خادم حسین رضوی کی اچانک وفات کئی سوالات کو جنم دے گئی،آصف جلالی

     خادم حسین رضوی کی اچانک وفات کئی سوالات کو جنم دے گئی،آصف جلالی

  

لاہور (سٹی رپورٹر)تحریک لبیک یا رسول اللہ صلی اللہ علیک وسلم کے سربراہ اور تحریک صراط مستقیم کے بانی ڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی نے نماز جنازہ کے بعد میڈیا سے گفتگومیں میں کہا اایک طویل مدت تک علامہ خادم حسین رضوی اور بندہ ناچیز نے تحفظ ناموس رسالتؐ اور تحفظ ختم نبوتؐ کیلئے طوفانوں کا مقابلہ کیا۔سنٹرل جیل کوٹ لکھ پت سے چار ماہ کے بعد میری رہائی کے دن ہی وہ خالق حقیقی سے جا ملے۔اگرچہ موت اچانک آتی ہے مگر ان کی اچانک موت اور اس سے پہلے کے کچھ دنوں کے حالات و واقعات نے صاحب بصیرت لوگوں کیلئے کچھ تشویشناک سوالات کو جنم دیا ہے۔اللہ تعالی انہیں اپنے جوار رحمت میں جگہ عطا فرمائے۔ انٹرنیشنل ختم نبوت موؤمنٹ کے مرکزی امیرمولانا ڈاکٹر سعید احمد عنا یت اللہ،،مرکزی سیکرٹری جنرل مولانا ڈاکٹر احمد علی سراج، نائب امیرمولانا حافظ ملک عبدالصمد، مولانا عبدالروف مکی،مولانا محمد الیاس چنیوٹی ایم پی اے، مولانا صاحبزادہ زاہد محمود قاسمی، معاونِ خصوصی امیر مرکزیہ مولانا محمد بن سعید، مولانا قاری محمد طیب عباسی، مولانا امداد اللہ قاسمی، مولانا قاری شبیر احمد عثمانی، مولانا قاری محمد رفیق وجھوی اور مولانا غلام یاسین صدیقی نے تحریک لبیک کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کی اچانک وفات پر اظہار تعزیت کرتے ہوئے کہا کہ مرحوم نے مشکل ترین حالات میں بھی ناموس رسالت ؐ کے تحفظ کیلئے جس جرات وبہادری کیسا تھ میدان عمل میں نکل کرمردانہ وار مقابلہ کیا وہ تاریخ کا روشن حصہ ہے، علامہ خادم حسین رضوی کی وفات سے ملک ایک سچے عاشق رسولؐ اور مجاہد ختم نبوت سے محروم ہوگیا ، انٹرنیشنل ختم نبوت موؤمنٹ  لواحقین و ورثاء اور جماعت کے غم میں برابر کی شریک ہے، دعاہے  اللہ تعالی مرحوم کوجنت الفردوس میں اعلیٰ مقام اور لواحقین کو صبرجمیل عطا فرمائے۔

اظہار تعزیت

آصف جلالی

مزید :

صفحہ اول -