میری ماں |عائشہ انتظار |

میری ماں |عائشہ انتظار |
میری ماں |عائشہ انتظار |

  

میری ماں 

کہنے کو تو صرف اک لفظ ہے ماں

اک لفظ میں لیکن نہیں بیاں ہو سکتی 

کوئی  نہیں ہےتیرے جیسا 

اک تو ہی تو ہے  ماں

تیری اک مسکان میں دنیا بسی ہے  

دعا ہے کوئی غم نہ آ ئے تجھے  

سمیٹ لیتی ہے اپنے آ نچل میں سارے دکھ  

اور سکھاتی ہے   ہر حال میں خوش رہنا  

تیری میٹھی ڈانٹ بھی ضروری ہے ماں

اس میں بھی جھلکتا ہے تیرا پیار 

بھول جاتی ہوں سارے غم

تیری جھولی میں سر رکھتے ہی 

 تجھ سے زیادہ نہ پایا مخلص کسی کو  

تیرے ہی دم سے ساری رونقیں ہیں 

میری زندگی سے کبھی دورنہ جانا 

ہر بار تو بنتی ہے میرا سہارا  

نہ اُتارسکوں گی تیرا قرض میں  

سلامت رہے صدا تیرا آنچل  

  تو ہی دوجہانوں میں جنت ہے  

شاعرہ: عائشہ انتظار

Meri   Maan 

Kehnay   Ko   To   Ik   Lafz   Hay   Maan

Ik   Lafz   Men   Lekin   Nahen   Bayaan   Ho   Sakti

  Koi   Nahen   Hay   Teray   Jaisa 

  Ik   Tu   Hi   To   Hay   Maan

 Teri   Ik   Muskaan   Men   Dunya  Basi   Hay

Dua   Hay   Koi   Gham   Na   Aaey   Tujhay 

Samait    Laiti   Hay    Apnay   Aanchal   Men   Saaray   Dukh

 Aor  Sikhaati   Hay   Har   Haal   Men   Khush   Rehna

Teri   Meethi   Daant   Bhi   Zaroori   Hay   Maan

 Iss   Men   Bhi   Jhalakta   Hay   Tera   Payaar

Bhool   Jaati   Hun   Saaray   Gham

Teri   Jholi   Men   Sar   Rakhtay   Hi

Tujh   Say   Zayaada   Na   Paaya   Mukhlis   Kisi   Ko

 Teray   Hi   Dam   Say   Saari   Raonqen   Hen

Meri   Zindagi   Say   Kabhi   Door   Na   Jaana

 Har    Baar   Tu   Banti   Hay   Mera   Sahaara

Na   Utaar   Sakun   Gi   Tera   Qarz   Main

 Salaamat   Rahay   Sadaa   Tera   Aanchal

 Tu   Hi   Dono   Jahaanon   Men   Jannat   Hay

 

 Poet: Aysha   Intizar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -