چین کا برطانیہ مین تاریخ کی سب سے بڑی 30ارب پاؤنڈ کی سرمایہ کاری کا اعلان

چین کا برطانیہ مین تاریخ کی سب سے بڑی 30ارب پاؤنڈ کی سرمایہ کاری کا اعلان

  



 لندن (مانیٹرنگ ڈیسک ) چین نے برطانیہ میں تاریخ کی سب سے بڑی سرمایہ کاری کردی اور دونوں ممالک کے درمیان جوہری توانائی کے ایک معاہدے پر سمجھوتہ طے پا گیا ہے۔رپورٹ کے مطابق 18 ارب ڈالر مالیت کے جوہری پلانٹ سے توانائی کا حصول 2025 ء تک ممکن ہو سکے گا اور سمجھوتے کے تحت اس کی تعمیر لاگت کا 30 فیصد قیمت چین ادا کرے گا۔بدھ کے روز چینی صدر نے معاہدے پر دستخط کردیے ہیں اور بیجنگ حکومت منصوبے پر30ارب پاؤنڈ خرچ کرے گی۔ معاہدے کے تحت دونوں ممالک کی شراکت داری سے سفوک میں سزویل اور ایسیکس میں براڈ ویل کے دو دیگر جوہری منصوبے پر بھی کام ہو گا۔برطانوی حکومت کے مطابق اس منصوبے سے تقریباً 25 ہزار روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے اور 60 لاکھ مکانوں تک وافر مقدار میں بجلی پہنچائی جا سکے گی۔پلانٹ کی تعمیر فرانس کی توانائی کی کمپنی ای ڈی ایف چین کی سرکاری جوہری توانائی کے کمپنی سی جی این کے ساتھ مل کر کرے گی۔جوہری معاہدے کے حوالے سے برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون پر تنقید بھی کی جا رہی ہے کہ وہ چین کے انسانی حقوق کے ریکارڈ کو نظر انداز کرتے ہوئے تجارتی مفادات کے لیے چین کے آگے جھک گئے ہیں۔ تاہم ڈیوڈ کیمرون نے چینی صدر کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مضبوط معاشی اور تجارتی تعلقات قائم کیے بغیر برطانیہ چین کے ساتھ انسانی حقوق جیسے معاملات پر کھل کر بات نہیں کر سکتا۔کیمرون نے مزید کہا کہ بیجنگ دنیا کو سستا فولاد فراہم کرنے کے سلسلے میں کمی لانے کا منصوبہ رکھتا ہے، جس کی وجہ سے برطانیہ میں بھی اسٹیل کی صنعت متاثر ہوئی ہے۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چینی صدر شی جن پِنگ نے کہا کہ وہ لندن کے ساتھ ایک بین الاقوامی اسٹریٹیجک پارٹنرشپ قائم کرنا چاہتے ہیں اور دونوں ملکوں کے تعلقات میں بہتری کے خواہشمند ہیں۔

مزید : صفحہ اول


loading...