ٹریڈ پالیسی کے اعلان میں مزید تاخیر نہیں ہونی چاہیے، زاہد سعید

ٹریڈ پالیسی کے اعلان میں مزید تاخیر نہیں ہونی چاہیے، زاہد سعید

  



کراچی(اکنامک رپورٹر) کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈ اینڈ انڈسٹری (کاٹی) کے صدر زاہد سعید نے کہا ہے کہ ٹریڈ پالیسی فریم ورک اور برآمد کنندگان کے لیے پیکج کے اعلانات میں تاخیر مزید مسائل کو جنم دے گی، وزیراعظم میاں نواز شریف سے ہماری 10ستمبر کو ہونے والی ملاقات میں انھوں نے چند دنوں میں اسٹریٹجک ٹریڈ پالیسی فریم ورک (ایس ٹی پی ایف) کے اعلان کا عندیہ دیا تھا مگر بہ ظاہر معلوم ہوتا ہے کہ حکومت کو اس میں تاخیر سے پیدا ہونے والی مشکلات کا اندازہ ہی نہیں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ دنیا اس انتظار میں نہیں رہے گی کہ ہم کب اپنی پالیسیز کا اعلان کرتے ہیں، گزرتے وقت کے ساتھ دیگر ممالک کی کی کمپنیاں عالمی مارکیٹ میں پاکستانی کمپنیوں کی جگہ لے رہی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ان مجوزہ پالیسیز میں مختلف صنعتی شعبوں کی بہتری کو ہدف بنانا ہوگا۔ زاہد سعید نے کہا کہ معاشی سال 2014-15 میں پاکستانی برآمدات بمشکل 24بلین امریکی ڈالر کی سطح تک پہنچ پائی تھیں جب کہ خطے کے دیگر ممالک سے موازنہ کیا جائے تو بنگلا دیش میں یہ برآمدات 31اور ویتنام میں97بلین امریکی ڈالر سے زائد رہیں، ان دونوں ممالک کی برآمدات کا بڑا حصہ ٹیکسٹال اور اور گارمنٹس کی مصنوعات پر مشتمل تھا۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان میں مجموعی طور پر صنعتوں کو مسائل کا سامنا ہے، اس میں براہ راست برآمدات سے متعلقہ صنعتوں کو خصوصی توجہ کی ضرورت ہے اور اس میں ٹیکسٹائل کی صنعت سر فہرست ہے، ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی مجموعی برآمدات اور عوام کو روزگار کی فراہمی کے حوالے سے انتہائی اہم صنعتی شعبوں کو خصوصی اہمیت ملنی چاہیے۔ انھوں نے کہا کہ رواں ماہ کے آغاز میں وفاقی وزیر تجارت خرم دستگیر کراچی کے دورہ پر آئے تھے تو انھوں نے کاٹی کا بھی دورہ کیا تھا اور اس موقعے پر بھی انھوں نے ٹریڈ پالیسی فریم ورک اور خصوصی پیکج کے جلد اعلانات کا عندیہ دیا تھا لیکن تاحال اس سلسلے میں کوئی عملی پیش رفت نہیں ہوسکی، انھوں نے کہا کہ کورنگی صنعتی علاقے سمیت کراچی کے تمام ہی صنعتی علاقوں کو درپیش انفرااسٹرکچر کے مسائل کے حوالے سے ہم پہلے بھی کئی بار حکومت کو مشترکہ لائحہ عمل تیار کرنے کی پیش کش کرچکے ہیں لیکن اس سلسلے میں بھی پیش رفت نہیں ہوپارہی۔ انھوں نے مزید کہا کہ عوام کو روزگار اور بنیادی ضروریات کی فراہمی کا براہ راست تعلق معیشت سے متعلق اپنائی جانے والی پالیسیوں سے ہے اور اس سلسلے میں تاخیر سے مسائل کی سنگینی میں اضافہ ہوگا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...