خاتون کو ریپ کرنے کے بعد اس کے اعضاءکے ساتھ ایسی حرکت کہ آپ کے بھی ہوش اُڑجائیں گے

خاتون کو ریپ کرنے کے بعد اس کے اعضاءکے ساتھ ایسی حرکت کہ آپ کے بھی ہوش ...
خاتون کو ریپ کرنے کے بعد اس کے اعضاءکے ساتھ ایسی حرکت کہ آپ کے بھی ہوش اُڑجائیں گے

  

ماسکو (نیوز ڈیسک) روس کی شمالی ریاست سائبیریا میں انسانوں کے بھیس میں چھپے دو بھیڑیوں نے ایک ایسا لرزہ خیز جرم کر ڈالا کہ جسے رہتی دنیا تک انسان کے بھیانک ترین جرائم میں شمار کیا جاتا رہے گا۔

میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق کیرل نیمکن اور سرگی میتلا یووف نامی درندوں نے ایک پارٹی کا اہتمام کررکھا تھا جس میں ان کے متعدد قریبی دوست بھی شامل تھے۔ پارٹی کے دوران سب نے کثرت سے شراب نوشی کی جس کے بعد سب کی حالت ابتر تھی۔ نیمکن اور میتلا یووف نے جب ایک نوجوان خاتون کو نشے میں نیم مدہوش دیکھا تو اسے جنسی ہوس کا نشانہ بنانے کا فیصلہ کیا اور اسے لے کر تہہ خانے میں چلے گئے جہاں اسے زیادتی کا نشانہ بناتے رہے۔ جب خاتون کی حالت ذرا سنبھلی تو اس نے نیمکن اور میتلا یوف کو لعن طعن کی اور ان کے خلاف پولیس کو شکایت کرنے کی دھمکی بھی دی۔ یہ صورتحال دیکھ کر دونوں نے اسے پکڑا اور ایک سٹورمیں بند کردیا، لیکن جب خاتون نے شور مچانا اور دروازہ پیٹنا شروع کردیا تو نیمکن ایک بڑا خنجر لے کر سٹور کے دروازے کی طرف بڑھا اور اسے کھول دیا۔ جونہی بیچاری خاتون نے سر دروازے سے باہر نکالا تو اس ظالم نے خنجر اس کے گلے میں اتاردیا۔

لڑکی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے والے نوجوان نے اُس سے شادی رچالی لیکن پھر ایسا شرمناک کام کردیا کہ جان کر ہر انسان گھبراجائے

خاتون کو قتل کرنے کے بعد یہ دونوں اسے اٹھا کر گھر کے ٹیرس پر لے گئے جہاں میتلا یووف ایک کلہاڑی لے کر آیا اور اس کے جسم کے ٹکڑے کرنا شروع کردئیے۔ دونوں نے خاتون کے کٹے ہوئے گوشت کو کھانا بھی شروع کر دیا جبکہ میتلا یووف نے اس کی کٹی ہوئی ٹانگ اٹھائی اور اسے لے کر پورے گھر میں پھرتا رہا۔ اس دوران وہ خود بھی اس میں سے گوشت کھاتا رہا اور اپنے دوستوں کو بھی اس کی پیشکش کرتا رہا۔ بعدازاں خاتون کے جسم کے ٹکڑوں کو پلاسٹک کے لفافوں میں بند کرکے قریبی کوڑادان میں پھینک دیا گیا، اور اس تمام وحشت و بربریت کے بعد بھی ان کی پارٹی جاری رہی۔

رونگٹے کھڑے کر دینے والے اس جرم کا انکشاف اس وقت ہوا جب خاتون کو قتل کر کے اس کا گوشت کھانے والے درندوں میں سے ایک کی اہلیہ نے پولیس کو تمام تفصیلات بتادیں۔ دونوں ملزمان کو گرفتار کرنے کے بعد ان کے خلاف ایک طویل قانونی کارروائی کا آغاز کیا گیا، جس کا اب اختتام ہوچکا ہے اور دونوں کو 12 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ سزا کا فیصلہ سامنے آنے پر روسی عوام کا صدمہ اور اشتعال مزید بڑھ گیا ہے کیونکہ لوگ اس بات پر یقین نہیں کر پارہے کہ ایسے بھیانک جرم کا ارتکاب کرنے والے درندوں کو محض 12 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -