افغان تجارتی پالیسی کا ازسرنو جائزہ ،5شعبوں کو گیس پر 44ارب سبسڈی دینگے ، اسد عمر

افغان تجارتی پالیسی کا ازسرنو جائزہ ،5شعبوں کو گیس پر 44ارب سبسڈی دینگے ، اسد ...

  

فیصل آباد(اے پی پی )وفاقی وزیر خزانہ اسدعمر نے کہا کہ ملک میں ٹیکسٹائل کے نظام کوپرو گروتھ بنانے کیلئے ٹیکس ریفارم کمیٹی قائم کر دی گئی ہے جبکہ مینو فیکچرنگ کی سطح پر ٹیکسوں کی بھر مار کو ختم کرنے کیلئے بھی ضروری اقدامات اٹھائے جائیں گے،ٹیکسٹائل سمیت دیگر 5 اہم برآمدی شعبوں کو یکساں نرخوں پر گیس مہیا کرنے کیلئے 44 ارب روے کی سبسڈی دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ آل پاکستان ٹیکسٹائل پروسیسنگ ملز ایسوسی ایشن کی تقریب سے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ محدود وسائل کے باوجود وہ ٹیکسٹائل سیکٹر کو زیادہ سے زیادہ سہولتیں مہیا کرنے کیلئے کوشاں ہیں۔ انہوں نے اس سلسلہ میں گیس کی فراہمی کیلئے 44 ارب روپے کی سبسڈی کا ذکر کیا اور کہا کہ ا س سے ملکی سطح پر پیداواری عمل کو تیز کرنے کے علاوہ لوگوں کیلئے روزگار کے نئے مواقع بھی پیدا کئے جا سکیں گے۔ افغان ٹریڈ کے بارے میں موجودہ پالیسی کا از سر نو جائزہ لیں گے تاکہ ہمسایہ ملک کی کپڑے کی تمام ترضروریات کو پورا کیا جا سکے اس طرح نہ صرف ہماری صنعتوں میں پیداواری عمل تیز ہو گا بلکہ اس سے ہمسایہ ملک کیلئے برآمدات میں بھی کئی گنا اضافہ کیا جا سکے گا ۔اس موقع پراپٹپما کے مرکزی چیئرمین انجینئر رضوان اشرف نے بتایا کہ اپٹپما ویلیو ایڈڈ ٹیکسٹائل سیکٹر کی سب سے بڑی چین ہے جبکہ ملک بھر میں اس کے تین ریجنل دفاتر ہیں۔ اس وقت سب سے بڑا مسئلہ جی آئی ڈی سی کا ہے جب پاکستان میں گیس کے ذخائر ختم ہونے لگے تو حکومت نے ایران، پاکستان اور ترکمانستان ، افغانستان، پاکستان اور انڈیا کے درمیان گیس پائپ لائن بچھانے کیلئے گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس عائد کیا تھا مگر کئی سال گزرنے کے باوجود اس پر کام ہی شروع نہیں ہو سکا۔ دریں اثنا وفاقی وزیر خزانہ نے ٹیکسٹائل پالیسی کی تیاری کے سلسلہ میں معروف صنعتکار ظفر اقبال سرور کی کوششوں کو سراہا ہے اور کہا کہ اس پالیسی پر عمل درآمد سے نہ صرف ٹیکسٹائل سیکٹر کو موجودہ بحران سے نکالا جا سکے گا بلکہ مجموعی ملکی برآمدات میں بھی اس کے حصے کو مزید بڑھایا جا سکے گا۔ جس پر ظفر اقبال سرور کی خدمات کے اعتراف میں اسدعمرنے انہیں گولڈ میڈل پیش کیا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اُن کی حکومت نے ٹیکسٹائل سمیت دیگر 5 اہم برآمدی شعبوں کو یکساں نرخوں پر گیس مہیا کرنے کیلئے 44 ارب روپے کی سبسڈی دینے کا فیصلہ کیا ہے جن سے ٹیکسٹائل کیلئے برآمد کی جانے والی مصنوعات کی پیداوار ی لاگت کو کم کر کے عالمی منڈیوں میں مسابقت کی پوزیشن میں لایا جا سکے گا۔ پی ٹی آئی کی حکومت پالیسی سازی میں بزنس کمیونٹی کو براہ راست شرکت کی حوصلہ افزائی کرے گی کیونکہ موجودہ بحرانوں سے نکلنے کیلئے حکومت، عوام اور خاص طور پر بزنس کمیونٹی کو مل کر جدوجہد کرنا ہو گی۔

مزید :

صفحہ اول -