ااسحاق ڈارنعرہ تکبیر لگائیں اورواپس آئیں،مشاہد اللہ

ااسحاق ڈارنعرہ تکبیر لگائیں اورواپس آئیں،مشاہد اللہ

  

سلام آباد( آن لائن) مسلم لیگ (ن)کے سینٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈارنے اقتدار انجوائے کیا، اب واپس آئیں،اسحاق ڈارنعرہ تکبیر لگائیں اورواپس آئیں بھلے جیل میں ڈالیں۔سینئررہنما مسلم لیگ ن سینٹر مشاہد اللہ نے نجی ٹی وی سے گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ نوازشریف اورمریم مقدمات کاسامنا کرسکتے ہیں تو اسحاق ڈارکوبھی واپس آنا چاہئے،نوازشریف اورمریم نوازاب سیاسی سرگرمیاں شروع کریں گے، چودھری نثارکی مسلم لیگ ن میں واپسی میں کوئی حرج نہیں،چودھری نثار کسی پارٹی میں شامل نہیں ہوئے،اب نوازشریف اورمریم الیکشن سے پہلے والے روپ میں واپس آئیں گے، پرویزالہٰی سپیکرپنجاب اسمبلی ہیں یا نیب پنجاب کے چیف؟شہبازشریف نے ہمیشہ بھائی کا ساتھ دیا ہے، مریم نوازاگرنوازشریف کی جانشین بنتی ہیں تو یہ وراثت یابادشاہت نہیں ہوگی،سودے بازی کی کوشش ہوتی رہی یہ کرلیں تودھرنا نہیں ہوگا،پانامانہیں ہوگا۔ موجودہ وزیر اطلاعات دھڑلے سے جھوٹ بولتا ہے،گنڈاپورنے لندن پلان کی حقیقت تسلیم کی جوغیرمعمولی بات ہے، انہوں نے کہا کہ لندن پلان کی تحقیقات کیلئے کمیشن بنناچاہئے، عمران خان جانتے ہیں شفاف الیکشن کے تحت وہ کبھی وزیراعظم نہیں بن سکتے تھے،انتخابات کوشفاف ثابت کردیں تو حکومت کو5سال ملنے چاہئیں،دھاندلی ثابت ہوتو حکومت کوایک دن میں مستعفی ہوجانا چاہئے،ان کا کہناتھا کہ میری وزارت سے استعفا لینے والوں میں اپنوں کو جلدی تھی۔

مشاہد اللہس

اہور(آئی این پی) مسلم لیگ (ن) کے مرکزی رہنما سینیٹر مشاہد اللہ خان نے پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کی جانب سے حکومت سے نجات حاصل کرنے کے بیان کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اپوزیشن کو فی الفور آگے بڑھنا چاہیے اور مضبوط اتحاد بنانا چاہیے ۔ آصف زرداری کی پریس کانفرنس پر اپنے رد عمل میں انہوں نے کہا کہ حکومت کی نا اہلی بہت کم وقت میں سامنے آنے کی بات تو پاکستان کا بچہ بچہ کہہ رہا ہے اور آصف علی زرداری ان کی آواز بنے ہیں ۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ موجودہ حکومت کی جانب سے انتہائی بیدردی کے ساتھ ملک کے حالات خراب کئے جارہے ہیں اور معیشت کے ساتھ بد ترین سلوک کیا جارہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے تو بہت اچھے حالات میں ملک چھوڑا تھا اور اس وقت ساڑھے 18ارب ڈالر کے ذخائر موجود تھے جو آج 8ارب ڈالر رہے گئے ہیں ۔ موجودہ حکمران کب تک جھوٹ بولیں گے ۔ یہ منتخب نہیں بلکہ غیر حقیقی اور زور زبردستی لائی ہوئی حکومت ہے اس لئے ان کے ہاتھ میں کچھ بھی نہیں ہے اور حکومت کو خود بھی یہ معلوم ہے ۔ انہوں نے کہا کہ دھاندلی کی تحقیقات کیلئے کمیٹی بن گئی ہے اور پوری دنیا جانتی ہے کہ عام انتخابات میں دھاندلی ہوئی ہے اور ضمنی انتخابات کے نتائج نے بھی اس پر مہر ثبت کر دی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے مقابلے میں کوئی پارٹی یا غیر حقیقی حکومت زیادہ اہم نہیں ۔ جہاں تک آصف زرداری کی حکومت سے نجات حاصل کرنے کی بات ہے تو یہ انتہائی خوش آئند ہے ۔ اس پر اپوزیشن کو فی الفور آگے بڑھنا چاہیے اور ایک مضبوط اتحاد بنانا چاہیے ۔ ہم نے اس کے ساتھ سسٹم کو بھی قائم رکھنا ہے ۔

مزید :

صفحہ اول -