چہلم امام حسین ؑ اور میلاد النبی ؐ کے جلوسوں کو شایا ن شان طریقے سے منایا جائے : سردار حسین زاہد

چہلم امام حسین ؑ اور میلاد النبی ؐ کے جلوسوں کو شایا ن شان طریقے سے منایا جائے ...

  

پشاور(پ ر) امامیہ جرگہ خیبر پختونخوا کے سیکرٹری جنرل سردار سجاد حسین زاہد نے پشاور اور ملک کے دیگر شہروں میں شیعہ مسلمانوں کے ٹارگٹ کلنگ اورقتل عام کے پر زور مذمت کرتے ہوئے اسے ملک کی سلامتی اور بقاء کے خلاف گہری سازش قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ اس کے پیچھے عالمی سامراج اور پاکستان دشمن قوتوں کے ملوث ہونے کو رد نہیں کیا جا سکتا یہ بات انہوں نے چہلم امام حسین ؑ و میلاد مصطفیٰ ﷺ اور ٹارگٹ کلنگ کے حوالے سے بلائے گئے اہم قومی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی جس میں ممتاز علماء کرام ،ذاکرین عظام، دانشوارانِ قوم ، قومی جماعتوں کے نمائندہ گان ، ماتمی سنگتوں کے سالار،سکاؤٹس تنظیموں کے سربراہوں محرم کمیٹی خیبر پختونخوا کے نمائندوں کے علاوہ صوبے کے دیگر اضلاع سے بھی نمائندہ تنظیموں کے نمائندہ گان نے بھی اجلاس میں شرکت کی اور اپنے علاقوں کی صورتحال سے آگاہ کیا مقررین نے اجلاس کو بتایا کہ گزشتہ محرم الحرام میں انتظامیہ ،پولیس اور دیگر اداروں کی وجہ سے عزاداران امام حسین ؑ کو عدالت عالیہ پشاور ہائی کورٹ کے فیصلے کے باوجود تنگ کیا جاتا رہا مجالس عزاء و ماتم داری گھروں کے اندر بھی ادا کرنے سے روکنے کی پورے صوبے میں اس روش کو جاری رکھا اجلاس سے سردار سجاد حسین زاہد نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملت جعفریہ کو دیوار سے لگانے کے نتائج کسی صورت میں بھی ملک کے مفادمیں نہیں ہو سکتے حکومت اور انتظامیہ معصوم شہریوں کو تحفظ دینے میں بری طرح ناکام ہو چکی ہیں ملک ،صوبہ اور شہر بھر میں شیعہ مسلمانوں کی ٹارگٹ کلنگ روزانہ کا معمول بن چکی ہے قاتل سر عام دندناتے پھر رہے ہیں اور اسلام کے نام پر پورے پاکستان اور خصوصاً صوبہ خیبر پختونخوا میں فرقہ واریت کو پروان چڑھایا جا رہا ہے ہم باربار انتظامیہ کے نوٹس میں یہ باتیں لا چکے ہیں مگر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتیں مٹھی بھردہشت گردوں کے سامنے بے بس ہو چکی ہیں تاریخ گواہ ہے کہ طاقت اور بندوق کے زور پر حسینیت ؑ کو مٹانے کی کوششیں کی گئیں مگر ہمیشہ حسینیتؑ کو مٹانے والے خود ہی مٹتے رہے انہوں نے کہا کہ واقعہ کربلا فقط ایک حق و باطل کے درمیان جنگ کا نام نہیں ، بلکہ واقعہ کربلا ایک سوچ ، نظریئے، فلسفے اور ڈکٹیٹر کے مقابلے کا نام ہے جو قیامت تک زندہ رہے گا انہوں نے کہا کہ تشعیوں کی 14سوں سالہ تاریخ قربانیوں سے بھری ہوئی ہے اور یہ قربانیاں واقعہ کربلا کا تسلسل ہیں انہوں نے کہا کہ عزاداری امام حسینؑ ہمارا قانونی آئینی اور مذہبی حق ہے جس کیلئے ہم کسی بھی قربانی کیلئے تیار ہیں اور آج بھی دہشت گردوں کا مقابلہ کرنے کیلئے پوری طرح منظم اور چوکس ہیں ہماری خاموشی کو ہماری کمزوری نا سمجھا جائے ۔ سردار سجاد حسین زاہد نے مزید کہا کہ گزشتہ محرموں کی طرح اس بار 2018ء میں بھی پورے صوبہ خیبر پختونخوا میں عزاداران امام حسینؑ پر مراسم عزاداری ادا کرنے کے سلسلے میں ایف آئی آرز درج کی گئی ہم نے بار بار حکومتی اداروں کو واضح طور پر بتا دیا ہے کہ آپ کے ان اقدامات جو کہ غیر قانونی غیر آئینی اور انسانی حقوق کی نفی کرتے ہیں پر زور مذمت کرتے ہوئے مسترد کرتے ہیں اس موقع پر محرم کمیٹی خیبر پختونخوا کے سیکرٹری آخونزادہ مظفر علی نے بھی خطاب کرتے ہوئے انتظامیہ کو خبر دار کیا کہ عدالت عالیہ پشاور ہائی کورٹ کی ڈائریکشن کی روشنی میں جو کہ 30اگست کو ہوا تھا اب تک صوبائی حکومت ،پولیس اور ضلعی انتظامیہ ٹال مٹول سے کام لے رہی ہے ہم واضح طور پربتا دینا چاہتے ہیں کہ عزادار امام حسین ؑ کے سلسلے میں کسی قسم کا سمجھوتا نہیں کیا جائے گا اجلاس سے دیگر ارکان نے بھی خطاب کیا اجلاس میں گزشتہ محرم الحرام کے سلسلے میں تفصیلی رپورٹ بھی پیش کی گئی آخر میں سردار سجاد حسین زاہد نے مزید کہا چہلم امام حسین ؑ اور میلاد مصطفیٰ ﷺ کے جلوسوں کو شایان شان اور عقیدت و احترام سے بھر پور طریقے سے منانے کی ہدایت کی انہوں نے کہا کہ عزداری اور میلاد مصطفیٰ ﷺ کے جلوسوں پر نا پہلے کوئی سمجھوتا کیا گیا اور نا آئندہ سمجھوتا کیا جائے گا آخر میں انہوں نے منتظمین جلوس لائسنس ہولڈر متولیان امام بارگاہان ماتمی سنگتوں ذاکرین عظام ، علمائے کرام ، سکاؤٹس تنظیموں ، جلوس خدام عزاداری اور دیگرتنظیموں سے گزارش کی کہ وہ محرم الحرام کی طرح چہلم امام حسین ؑ اور 8ربیع الاول تک شر پسندوں پر گہری نظر رکھے اور امن قائم کر نے کے سلسلے میں انتظامیہ اور پولیس سے بھر پور تعاون کریں انہوں نے خصوصی طور پر علمائے کرام اور ذاکرین عظام سے اپیل کی کہ وہ کسی صورت میں بھی اتحاد بین المسلمین کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں کیونکہ اسی میں مملکت خداداد پاکستان کی سا لمیت ہے آخر میں انہوں نے جلوسوں کی برآمدگی و اختتام بروقت ادا کرنے کی ہدایت کی اجلاس میں چند قرار دادبھی پاس کی گئیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -