این اے 247 اور پی ایس 111 میں ضمنی انتخابات کے دوران سیاسی گہما گہمی

این اے 247 اور پی ایس 111 میں ضمنی انتخابات کے دوران سیاسی گہما گہمی

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) کراچی میں قومی اسمبلی کے حلقے این اے 247 اور سندھ اسمبلی کے حلقے پی ایس 111 میں ضمنی انتخابات کے دوران سیاسی گرما گرمی دیکھنے میں آئی اور شہرکے مختلف مقامات پر پاکستان تحریک انصاف متحدہ قومی موومنٹ اورپیپلزپارٹی کے کارکنان آمنے سامنے آگئے۔صبح 8 بجے پولنگ کے آغاز کے بعد صورتحال معمول پر رہی، تاہم بعدازاں کراچی کے علاقے صدر لکی سٹار،گارڈن شومارکیٹ میں ایڈن گرامر اسکول اورکھارادرکے قریب لگائے گئے سیاسی کیمپوں میں موجود پی ٹی آئی ،پیپلزپارٹی اورایم کیو ایم کے کارکنان نے ایک دوسرے کے خلاف نعرے بازی کی۔ انچارج پیپلزپارٹی سینٹرل الیکشن سیل تاج حیدرنے الزام عائد کیا کہ این اے 247 کے پولنگ اسٹیشنوں پر پی ٹی آئی کے پولنگ ایجنٹوں نے پی ٹی آئی بیج پہنے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پریذائیڈائینگ آفیسرز ہمارے پولنگ ایجنٹوں سے مطالبہ کررہے ہیں کہ وہ پولنگ اسٹیشنوں میں داخل ہونے سے پہلے پارٹی کارڈ ساتھ لائیں.تاج حیدر نے پولنگ اسٹیشن 30، 31 حور بی بی حاجیانی ا سکول پولنگ سٹیشن 5، ایڈن گرامر اسکول، پولنگ اسٹیشن 22، 23، 24 جی الانا اسکول میں پی ٹی آئی کے پولنگ ایجنٹس کی طرف سے انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی جبکہ انتخابی عملہ پرضابطہ اخلاق پرپابندی نہ کرانے کا الزام عائد کیا۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ پارٹی کے بیج پہننے والے تمام پولنگ ایجنٹوں کو پولنگ اسٹیشنوں سے باہر نکالا جائے۔ علاوہ ازیں کھارادر،رنچھوڑلائن،صدرکے بعض پولنگ اسٹیشنزپرپی ٹی اورایم کیو ایم جبکہ کلفٹن کے بعض پولنگ اسٹیشنز پر پیپلزپارٹی اورتحریک انصاف کے ورکرز نے ایک دوسرے کے خلاف نعرے بازی کی لکی اسٹار صدرمیں ایم کیو ایم اورتحریک انصاف کے کارکنان ایک دوسرے کے خلاف شدید نعرے بازی کرتے ہوئے آمنے سامنے آگئے تاہم پہلے پولیس اور بعدازاں رینجرز نے مداخلت کرکے کارکنان کو منتشر کردیا جبکہ دوسرے کشیدہ علاقوں میں بھی پولیس اوررینجرکی گشت کے بعد صورتحال معمول پر آگئی۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -