ذخیرہ اندزوں کے خلاف کارروائی کی ہدایت؟

ذخیرہ اندزوں کے خلاف کارروائی کی ہدایت؟

  



وزیراعظم عمران خان نے اشیاء خوردنی اور ضرورت کے بڑھتے نرخوں کا نوٹس لیا اور ہدایت کی ہے کہ ذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن کیا جائے اور ایک ایسی موبائل ایپلی کیشن تیار کی جائے، جو درست قیمت بتائے تاکہ آڑھتی کسانوں کا استحصال نہ کر سکیں، وزیراعظم ہاؤس میں ایک اعلیٰ سطح اجلاس کی صدارت کے دوران اشیاء کی گرانی کا جائزہ لیا گیا۔آٹے کے نرخوں کے حوالے سے وزیراعظم نے قومی اقتصادی کونسل کے لئے ہدایت جاری کی کہ جلد از جلد گندم کی قیمتوں، ذخائر اور ضرورت کا جائزہ لے کر رپورٹ پیش کی جائے۔وزیراعظم کی طرف سے یہ احساس دیر بعد ہوا،پھر بھی غنیمت کہ مارکیٹ میں اشیاء خوردنی اور ضرورت پیداواری یونٹوں سے تھوک اور پرچون مارکیٹ میں بہت زیادہ فرق سے بک رہی ہیں۔ اس پورے سلسلے میں پیداواری مالکان اور آخری سرے پر خریدار کو نقصان اٹھانا پڑتا ہے اور درمیانی عناصر استحصال بھی کرتے اور کماتے ہیں یہ فکر اور انداز تو ٹھیک ہے،لیکن دیکھنا یہ ہے کہ خود سرکاری محکموں کا رویہ کیا ہے،آج تک یہاں پیداوار اور کھپت(ضرورت)کے لحاظ سے درست اعداد و شمار ہی نہیں ہیں۔حالات یہ ہیں کہ کوئٹہ میں کاشتکار کو ٹماٹر ڈیڑھ روپے کلو بیچنا پڑے اور کراچی سے لاہور اور پشاور تک یہ نرخ80سے 100روپے فی کلو تک ہیں۔یہی حالات پیاز اور دوسری سبزیوں کا ہے، دوسری طرف پھل بھی عام آدمی کی پہنچ سے دور ہو چکے۔ ان حالات میں یہ بہترین ہدایت ہے اگر اس پر دیانت داری سے عمل کیا گیا اور مارکیٹ پر اجارہ داری کا خاتمہ کرنے کے کام کا آغاز کر دیا گیا تو حالات میں کافی بہتری آ سکتی ہے۔وزیراعظم نے ہدایت کی، تو بروقت جائزہ بھی لیتے رہیں،کہ عوام کو ریلیف مل سکے۔

مزید : رائے /اداریہ