تحریک انصاف کے دیرینہ کارکن اپنی ہی پنجاب حکومت اور اس کے وزراءکی کرپشن اور نااہلی کا رونا رونے لگے،احتجاج کی دھمکی

تحریک انصاف کے دیرینہ کارکن اپنی ہی پنجاب حکومت اور اس کے وزراءکی کرپشن اور ...
تحریک انصاف کے دیرینہ کارکن اپنی ہی پنجاب حکومت اور اس کے وزراءکی کرپشن اور نااہلی کا رونا رونے لگے،احتجاج کی دھمکی

  



بہاولنگر(ویب ڈیسک) تحریک انصاف کی حکومت کو ایک سال سے زائد کا عرصہ بیت چکا ہے اور اب پی ٹی آئی کے کارکنان بھی اپنی حکومتی ٹیم کا رونا رونے لگے ہیں اور چشتیاں سے تحریک انصاف کے کارکن نے سوشل میڈیا پر محاذ کھول دیا اور سڑکوں پر آنے کی دھمکی بھی دیدی۔

تحریک انصاف کے دیرینہ ورکر ذیشان نے کہا کہ وزیر خوراک پنجاب کی نااہلی یا فلور ملز اور سٹاک کی ملی بھگت کے نتیجہ میں پنجاب اور جنوبی پنجاب میں آٹے اور معدہ کا بحران پیدا ہوچکا ہے، سابقہ حکومتیں امیر مافیا اور اشرافیہ سے مل کر کرپشن کرتی تھیں لیکن موجودہ حکومت میں کم از کم وزیر خوراک پنجاب کی کارکردگی کا منہ بولتا ثبوت یہ ہے کہ ان کے گھر بہاولپور اور گردونواح میں بحران اتنی شدت اختیار کرچکا ہے، آٹا کھلے عام 1750 روپے میں فروخت ہورہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ  گندم سپلائی اور ریٹ کے سلسلے میں موجودہ وزراءنے وہی پالیسی اپنائی ہے جو سابقہ کرپٹ حکومتوں نے اپنائی تھی۔ گندم 1375 روپے فلور ملز کو گندم کی سپلائی ،پسائی 192 فلور ملز کے اخراجات سمیت منافع اور 1567 روپے میں قیمت ٹریڈ رکھی گئی ۔ 808 روپے قیمت فروخت مقرر کردی گئی جس میں بجلی، پٹرول اور لیبر اخراجات شامل ہیں اور پرافٹ کی جو شرح مقرر کی گئی ہے وہ آج سے پانچ سال پہلے بھی یہی تھی۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ اس مسئلے پر غور کریں ، ورنہ سوشل میڈیا پر چلنے والی تحریک کو اگلے مرحلے میں سڑکوں پر لائیں گے اور اسے مزید تیز کریں گے ۔

مزید : علاقائی /پنجاب /بہاول نگر