آسٹرین حکومت کی طرف سے کورونا پابندیاں مزید سخت کیے جانے کا امکان

آسٹرین حکومت کی طرف سے کورونا پابندیاں مزید سخت کیے جانے کا امکان
آسٹرین حکومت کی طرف سے کورونا پابندیاں مزید سخت کیے جانے کا امکان

  

ویانا (اکرم باجوہ) نئے آسٹرین وزیراعظم الیگزینڈر شالین برگ آج  شام   وزیر صحت وولف گینگ میکسٹن  اور ریاستی گورنرز کے ساتھ ویڈیو کانفرنس میں اگلے اقدامات پر تبادلہ خیال کریں گے۔امکان ظاہر کیا جارہاہے کہ ایک بار پھر وبائی مرض سے نمٹنے کے لیے پابندیوں میں سختی لائی جاسکتی ہے۔

آسٹریا بھر میں گزشتہ روز  تقریبا  3700 نئے کیس رپورٹ ہونے کے بعد  تمام وفاقی ریاستوں میں یکساں اقدامات کی ضرورت کا سوال پیدا ہو گیا ہے    تاہم وزیراعظم کے لیے سوال یہ تھا کہ ہم ان لوگوں کے ساتھ کیا اقدامات کر رہے ہیں جو ویکسین لگوانے میں  ہچکچاتے ہیں اور تاخیری حربے استعمال کرتے ہیں کیونکہ ویکسینیشن کی شرح میں اضافہ کیا جانا چاہیے، ہمارے پاس کافی مقدار میں ویکسین موجود ہیں۔ آنے والے مہینوں میں بغیر ویکسین کے گروپ کے لیے مشکل ہو جائے گا۔

وزیر صحت میک سٹائن کو یقین ہے کہ جلد ہی ملک بھر میں قوانین کو سخت کیا جائے گا، اس وقت آسٹریا بھر کے مختلف ہسپتالوں میں  214 کورونا مریض انتہائی نگہداشت کے یونٹوں میں زیر علاج ہیں اور جلد ہی یہ تعداد 300 ہونے کی توقع ہے۔حکومت کے دوسرے مرحلے کے منصوبہ کے مطابق اس کے بعد پورے آسٹریا میں نائٹ ریستورانوں اور بڑے پروگرام صرف ان لوگوں کے لیے ہوں گے جن کو ویکسین دی گئی ہے اور جو صحت یاب ہوچکے ہیں۔

مزید :

کورونا وائرس -