ڈینگی زور پکڑنے لگا ،انتظامیہ نے رپورٹس چھپانا شروع کر دیں

ڈینگی زور پکڑنے لگا ،انتظامیہ نے رپورٹس چھپانا شروع کر دیں

  

                             لاہور(جاوید اقبال )صوبائی دارلحکومت ایک مرتبہ پھر ڈینگی مچھروں کا مرکز بن گیا ہے روزانہ ڈینگی کے درجنوں کیسز آنا شروع ہوگئے ہیں تاہم محکمہ صحت اور حکومت پنجاب کی ہدایت پر ہسپتالوں کی انتظامیہ یومیہ بنیادوں پر سامنے آنے والے ڈینگی بخار کے کیسز کی رپورٹس چھپانا شروع ہوگئے ہیں حالات اس نوبت پر آگئے ہیں کہ ڈینگی کے نازک حال مریضوں کو میگا کٹس کی ضرورت پیش آرہی ہے مگر بلڈ بنکوں اور ہسپتالوں میں میگا کٹس دستیاب ہی نہیں ہیں نہ مارکیٹ میں موجو د ہیں اور مریضوں کے پیارے اپنے مریضوں کی زندگیاں بچانے کے لئے مارے مارے پھر رہے ہیں بتایا گیا ہے کہ لاہور میں 150میں سے 50یونین کونسلیں ڈینگی کے مرکزکے طور پر سامنے آچکی ہیں جس میں راوی ٹاﺅن ،داتا گنج بخش ٹاﺅن ،گلبر گ ٹاوئن ،نشتر ٹاﺅن کی یونین کونسلیں سرفہرست ہیں ۔بتایا گیا کہ لاہور شہر کے گلی کوچوں میں ماضی کی طرح ڈینگی کے مریض سامنے آنا شروع ہوگئے ہیں۔ڈینگی کی علامات کے سامنے آنے پرمریض ہسپتالوں میں آتے ہیں جب ان کے سی بی سی نامی ٹیسٹ میں ڈینگی کی تصدیق ہوجاتی ہے تو ہسپتالوں کی انتظامیہ ”اوپر“سے ہدایت پر عمل کرتے ہوئے ایسے کیسز کو ڈینگی پازیٹو قرار دینے کی بجائے انہیں مذید ٹیسٹ کرانے کا کہہ کر ہسپتالوں سے چھٹی کرادیتے ہیں اور جب تک وہ ٹیسٹ ہوتے ہیں تب تک مریض خود بخود ٹھیک ہوجاتا ہے ۔بتایا گیا کہ محکمہ صحت اور ضلعی حکومت اور ٹاﺅنوں کے علم ہونے کے باوجود ایسے علاقے جہاں سے ڈینگی بخار کے مریض سامنے آرہے ہیں ان علاقوں میں سپرے کیا جاتا ہے مگر یہ سلسلہ بند کردیا جاتا ہے جس سے لاہور میں آئندہ دنوں میں ڈینگی کے مذید مریض سامنے آنے کے امکانات پیدا ہوگئے ہیں اس حوالے سے ڈی سی او لاہور کیپٹن (ر)عثمان کا کہنا ہے ڈینگی کے حساس علاقوں میں سپرے کو یقینی بنانے کا حکم جاری کیا گیا ہے اس پر عمل درآمد کرانے کے لئے ای ڈی او ہیلتھ اور متعلقہ ٹی ایم او پابند ہیں عمل نہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی ہوگی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -