انڈونیشیا کا سعودی عرب سے اپنے 7 لاکھ شہریوں کوواپس بلانے کا اعلان

انڈونیشیا کا سعودی عرب سے اپنے 7 لاکھ شہریوں کوواپس بلانے کا اعلان

  



جکارتہ(اے پی پی) انڈونیشیا کی حکومت نے روزگار کی تلاش میں سعودی عرب گئے اپنے 7 لاکھ شہریوں کو آئندہ 15 ماہ میں واپس بلانے کا اعلان کردیا ہے۔ سعودی عرب میں موجود انڈونیشیائی شہری زیادہ تر ڈرائیور اور گھریلو خادمائیں ہیں ۔ انڈونیشیا کے حکام کے مطابق انڈونیشیا کے صدر جوکوودودو نے چار ماہ قبل اعلان کیا تھا کہ وہ خواتین کو ملازمت کے لئے بیرون ملک بھجوانے کا سلسلہ بند کردیں گے۔ اس منصوبے کے تحت سعودی عرب ‘ کویت ‘ مصر ‘ متحدہ عرب امارات سمیت 21ممالک میں موجود انڈونیشیا کی خواتین کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اپنے کنٹریکٹ ختم کرکے وطن واپس آئیں ۔ انڈونیشیا کی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ اندرون ملک روزگار کے زیادہ سے زیادہ مواقع پیدا کرے گی تاکہ خواتین کو روزگار کے لئے بیرون ملک نہ جانا پڑے۔ حکام کا کہنا ہے کہ ملائیشیا ‘ تائیوان ‘ ہانگ کانگ ‘ سنگا پور اور برونائی جیسے ممالک میں روزگار کے سلسلہ میں خواتین کو بھجوانے کا سلسلہ جاری رہے گا اور انہیں بیرون ملک جانے سے پہلے مختلف ہنر سکھائے جائیں گے اس کے ساتھ ساتھ انہیں مختلف ممالک میں خواتین کو حاصل بنیادی انسانی حقوق کے حوالہ سے بھی آگاہی فراہم کی جائے گی۔

مزید : عالمی منظر