الیکشن کمیشن کا اجلاس ،عمران خان کا مطالبہ پھر مسترد ،صوبائی حکومتوں کو انتخابی ضابطہ اخلاق میں نرمی نہ برتنے کی ہدایت

الیکشن کمیشن کا اجلاس ،عمران خان کا مطالبہ پھر مسترد ،صوبائی حکومتوں کو ...

  



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک+ آن لائن + اے این این ) الیکشن کمیشن نے ایک بار پھر عمران خان کا مطالبہ مسترد کرتے ہوئے صوبائی حکومتوں کو ہدایت کی ہے کہ انتخابی ضابطہ اخلاق پر کوئی نرمی نہ برتی جائے،خلاف ورزی کی صورت میں فوری آگاہ کیا جائے جبکہ پنجاب اور سندھ نے انتخابی ضابطہ اخلاق پر مکمل عمل درآمد کی یقین دہانی کرائی ہے۔تفصیلات کے مطابق پیر کو چیف الیکشن کمشنر سردار رضا خان کے زیر صدارت پنجاب اور سندھ کے بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے اجلاس ہوا جس میں پنجاب اور سندھ کے چیف سیکرٹریز ،آئی جیز، ایف بی آرحکام، آئی جی اسلام آباد اور دیگر اعلیٰ حکام شریک ہوئے ، اجلاس میں پنجاب ا ور سندھ کے بلدیاتی بلدیاتی انتخابات کے ضابطہ اخلاق اور سیکیورٹی سے متعلق امور کا جائزہ لیا گیا۔ دونوں صوبوں کی طرف سے ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد کرانے کی یقین دہانی کرائی گئی ، صوبائی حکومتوں کے نمائندگان نے یہ بھی یقین دلایا کہ انتخابی عملے اور انتخابی مواد کے حوالے سے مکمل سیکیورٹی فراہم کی جائے گی ۔ اس موقع پر چیف الیکشن نے کہا ہے کہ ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد کے لئے فریقین اپنا کردار ادا کریں ، امیدوار اور ووٹرز ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد کریں ، انتخابی ضابطہ اخلاق کے معاملے پر کوئی نرمی نہ برتی جائے اور جہاں کہیں بھی اس کی خلاف ورزی ہو رہی ہو اس سے فوری پر الیکشن کمیشن کو آگاہ کیا جائے ۔بلدیاتی انتخابات کا بروقت اور شفاف انعقاد یقینی بنایا جائے ۔انھوں نے کہا کہ انتخابی ضابطہ اخلاق پر مکمل عملدرآمد کے لئے صوبوں ، الیکشن کمیشن میں مکمل ہم آہنگی ہے ۔ انتخابات کاانعقاد صوبائی حکومتوں اور انتظامیہ کے تعاون کے بغیر ممکن نہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بلدیاتی انتخابات یقینی بنانے کے لیے صوبائی حکومتیں تمام فریقین کویکساں مواقع فراہم کریں، امید ہے کہ پنجاب اور سندھ کی صوبائی حکومتیں تمام ضروری اقدامات بروئے کار لائیں گی۔اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے سیکرٹری الیکشن کمیشن بابر یعقوب فتح محمد نے کہا کہ اجلاس میں آئی جی پنجاب نے یقین دہانی کرائی ہے کہ پولیس کسی سیاسی دباؤمیں نہیں آئے گی اور نہ کسی پر پولیس کا دباؤ ڈالا جائے گا۔پنجاب پولیس ضمنی انتخاب میں بھی مکمل پیشہ ورانہ طریقے سے فرائض سر انجام دے گی۔سیکرٹری الیکشن کمیشن نے کہا کہ سندھ اور پنجاب میں بلدیاتی انتخابات میں رینجرز کی تعیناتی کا فیصلہ صوبوں کی درخواست پر کریں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ چیف سیکرٹریز پنجاب اور سندھ کو ترقیاتی فنڈز جاری نہ کرنے کی ہدایت کی ہے، ایسی پوسٹ جن کا انتخابات پر براہ راست اثر نہیں ہوتا، ان کے تقرر و تبادلے پر غور کر رہے ہیں۔، صوبوں اور اسلام آباد نے کچھ تقرروتبادلوں کی اجازت مانگی ہے، صوبوں نے یقین دلایا ہے کہ کوئی تقرری یا تبادلہ ای سی پی کی اجازت کے بغیر نہیں ہوگا جب کہ آئی جیز نے الیکشن کے دوران دہشت گردی کے خدشے سے آگاہ کیا ہے۔وزیر اعظم کے کسان پیکیج کے اعلان کا معاملہ ابھی کمیشن کے زیر غور نہیں آیا، وزیراعظم کو کسان پیکیج پر کلین چٹ نہیں دی، اگر کسی جماعت نے کسان پیکیج کے خلاف درخواست دائر کی تو ممکن ہے نوٹس لیا جائے لیکن تاحال کسی نے اس حوالے سے رجوع نہیں کیا ۔اسلام آباد کے بلدیاتی انتخابات کے رولز نوٹیفائی ہو گئے ہیں ، اٹک کے ضمنی انتخاب میں تجرباتی بنیادوں پر 35 پولنگ اسٹیشن کا نتیجہ موبائل ٹیکنالوجی کے ذریعے جمع کرایا جائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ کسی پارٹی سربراہ کو انتخابی مہم چلانے سے نہیں روکا، صرف ارکان اسمبلی پر انتخابی مہم چلانے پر پابندی عائد ہے۔سیکرٹری الیکشن کمیشن نے کہا کہ جن ترقیاتی اسکیموں کا ورک آرڈرپہلے آچکا ان اعتراض نہیں، وزیراعلیٰ کے احکامات پر بھی فنڈز کے اجرا پر پابندی ہوگی۔ آئی جی پنجاب نے امیدوار کی زبردستی دستبرداری کے معاملے پر بھی جواب دیا ہے جس میں انہوں نے واقعہ کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔

اسلام آباد (آئی این پی) الیکشن کمیشن نے سندھ اور پنجاب کی صوبائی حکومتوں کو بلدیاتی انتخابات کے دوران ان ترقیاتی اسکیموں پر کام جاری رکھنے کی اجازت دی ہے، جن کا ورک آرڈر انتخابی شیڈول سے قبل جاری کر دیا گیا تھا، صوبائی حکومتوں کو ہدایت کی گئی کہ انتخابی شیڈول جاری ہونے کے بعدنئی اسکیموں کی منظوری اور اجراء پرعائد پابندی پر سختی سے عملدرآمد کیا جائے۔ یہ فیصلہ پیر کو الیکشن کمیشن کے صدر دفتر میں چیف الیکشن کمشنر کی زیر صدارت ان کیمرہ اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے سیکرٹری الیکشن کمیشن بابر یعقوب نے کہا کہ آج کے اجلاس میں بلدیاتی انتخابات سمیت ضمنی انتخابات کے حوالے سے انتظامات اور اقدامات کا جائزہ لیا گیا، بلدیاتی انتخابات کے دوران افسران کے تقرر و تبادلوں کے ایشوز پر بھی غور کیا گیا، صوبوں نے یقین دہانی کرائی ہے کہ کوئی بھی ٹرانسفر اور پوسٹنگ ای سی پی کی اجازت کے بغیر نہیں کرائی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اجلاس میں صوبائی حکومت کے نمائندوں، نادرا حکام سمیت چیف کمشنر اسلام آباد نے بھی شرکت کی۔ انہوں نے کہا کہ صوبوں اور چیف کمشنر اسلام آباد نے بعض ضروری تبادلوں کی اجازت مانگی ہے، یہ ایسے تقرر و تبادلے ہیں جو انتخابات پر اثر انداز نہیں ہوں گے،کمیشن نے صوبوں کو اجازت دی کہ جن ترقیاتی اسکیموں کا ورک آرڈر انتخابی شیڈول سے پہلے جاری ہو چکا ہے ان پر کام جاری رکھنے کے حوالے سے کوئی پابندی نہیں، چیف منسٹرز افسران کی ہدایت پرفنڈز کے اجراء اور استعمال پر بھی پابندی ہو گی۔ چیف الیکشن کمشنر کی وضاحت طلبی پر آئی جی پنجاب نے لاہور میں امیدوار زبردستی دستبردار کرانے کے معاملے پر کمیشن کو تسلی بخش جواب دے دیا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ انتخابات کے دوران فوج اور رینجرز کی تعیناتی کا فیصلہ صوبوں کی درخواستوں پر کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اٹک میں ضمنی انتخابات کے دوران تجرباتی بنیادوں پر36پولنگ اسٹیشنز پر اینڈرائڈ ایپلی کیشنز کے ذریعے رزلٹ مرتب کئے جائیں گے۔

مزید : صفحہ اول


loading...