پتھراؤں کرنیوالے فلسطینیوں کو گولی مار دو ، اسرائیلی حکومت کا پولیس کو حکم

پتھراؤں کرنیوالے فلسطینیوں کو گولی مار دو ، اسرائیلی حکومت کا پولیس کو حکم

  



 مقبوضہ بیت المقدس(مانیٹرنگ ڈیسک) اسرائیلی حکومت نے پولیس اور دیگر سکیورٹی اداروں کو پتھر پھینکنے والے فلسطینیوں پر براہ راست گولی چلانے کی اجازت دیدی۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کے زیر صدارت منعقد ہونیوالے اعلیٰ سطح سکیورٹی اجلاس میں پولیس اور سکیورٹی اہلکاروں پر پتھر پھینکنے والے فلسطینیوں پر براہ راست فائرنگ کی منظوری دی گئی۔ اجلاس میں کہا گیا کہ پولیس اور فوج پتھراؤکرکے یہودیوں کی جانوں کو خطرے میں ڈالنے والے فلسطینی نوجوانوں پر گولی چلا سکتی ہے۔ اجلاس کے بعد ایک بیان میں اسرائیلی وزیراعظم نے کہا کہ ہم نے پولیس کے لئے ہدایات تبدیل کر دی ہیں۔ سنگ باری کرنے اور پٹرول بم پھینکنے والے فلسطینیوں کو پولیس کی گولیوں کا سامنا کرنا پڑے گا کیونکہ اب ہم نے پولیس کو ان پر گولی چلانے کی کھلی اجازت دے دی ہے۔دوسری جانب انسانی حقوق کی تنظیموں نے صہیونی حکومت کے اس اقدام کو بین الاقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے پولیس کو نہتے فلسطینیوں کے قتل عام کا نیا سرٹیفکیٹ جاری رکھنے کے مترادف قرار دیا ہے۔ انسانی حقوق کے ادارے "بتسلیم" کی جانب سے جاری ایک بیان میں پولیس کو فلسطینیوں پر گولی چلانے کی اجازت دینے کی شدید مذمت کی ہے۔ تنظیم نے خبردار کیا ہے کہ پولیس کو فلسطینی مظاہرین پر گولیاں چلانے کی اجازت دینے کے سنگین نتائج سامنے آ سکتے ہیں۔

اسرائیل

مزید : علاقائی