بھارتی جنگی طیارے سرحدی اڈو ں پر پہنچ گئے ،پاک فضائیہ کی دشمن کو منہ توڑ جواب دینے کیلئے موٹر وے پر مشقیں

بھارتی جنگی طیارے سرحدی اڈو ں پر پہنچ گئے ،پاک فضائیہ کی دشمن کو منہ توڑ جواب ...

نئی دہلی /اسلام آباد(اے این این ) جنگی جنون میں مبتلابھارت نے کولڈ سٹارٹ ڈاکٹرائن کے تحت پاکستان میں مخصوص اہداف پر حملوں کی تیاری کا پہلا مرحلہ مکمل کر لیا تاہم پاکستان نے دوٹوک الفاظ میں کہاہے کہ وہ پہل نہیں کرے گا لیکن اگر ریڈ لائن کراس کی گئی تواس کامنہ توڑ جواب دیاجائے گا۔میڈیارپورٹ کے مطابق پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی خطرناک سطح کو چھو رہی ہے اور ہمسایہ ملک نے کولڈ اسٹارٹ ڈاکٹرائن کے تین درجوں میں سے پہلا مرحلہ مکمل کرلیا ہے۔ رپور ٹ کے مطابق بھارتی فضائی فوج ایڈوانس اڈوں پر پہنچ گئی ہے اس کے علاوہ جنگ اور سرجیکل حملوں میں استعمال کیے جانے والے طیارے بھی اڈوں پر پہنچ چکے ہیں ۔ اب صرف دو مرحلے باقی رہ گئے ہیں تاہم پاکستان نے اپنے دفاعی اور جوابی تدابیر کیلئے اقدامات شروع کردیے ہیں۔دریں اثناء اثنا ء بھارت نے اوڑی حملے کے بعدپاکستان پرالزام تراشیوں کاسلسلہ درازکرتے ہوئے کنٹرول لائن پرسیکورٹی بڑھادی ہے اوراس نے اپنی سرحدی چوکیوں پرسرخ جھنڈے بھی لہرادیئے ہیں ۔دوسری جانب پاکستان نے بھی دوٹوک الفاظ میں واضح کردیاہے کہ وہ بھر پور دفاعی رد عمل کے لیے تیارہے اور حملے کا بھرپور جواب دیا جائے گا ۔ پاکستان نے کہاہے کہ اگرچہ وہ پہل نہیں کرے گا تاہم ریڈ لائن کراس نہیں کرنے دی جائے گی۔ وزیر اعظم اور آرمی چیف کے درمیان ٹیلی فون پرہونے والی گفتگو میں قوم اور مسلح افواج کی ہر حملے کا زبردست جواب دینے کی صلاحیت پر اطمینان کا اظہار کیا گیا ہے اوراگر بھارت حملہ کرتا ہے تو فوری طور پر بھرپور جواب دیا جائے گا ۔ اس موقع پر شمالی علاقہ جات کی پروازوں اور راستے سیل کرنے کی وجہ یہی کشیدگی بتائی جاتی ہے۔ دریں اثناء بھارتی دفاعی ماہرین نے مودی سرکارکوخبردارکیاہے کہ پاکستان کے خلاف کسی قسم کاجارحانہ اقدام بھارت کیلئے خطرناک ثابت ہوسکتاہے ۔ دفاعی تجزیہ کار راہل بیدی نے کہا کہ اگرچہ فوج کارروائی کرنے کے لیے بے تاب ہے لیکن سب سے اہم سوال یہ ہے کہ کیا بھار ت کے پاس پاکستان کے اندر اہداف کو نشانہ بنانے یا پاکستان میں محدود جنگ لڑنے کی صلاحیت اور انٹیلی جنس ہے۔ ماہرین نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ بھارت کی حکومتوں نے ایسی صلاحیت بڑھانے کے لیے کام نہیں کیا۔ میڈیا میں یہ بات کہی جا رہی ہے کہ فضائیہ کو پاکستان کے اندر اہداف کو نشانہ بنانے کے لیے استعمال کرنا چاہیے لیکن یہ آسان نہیں ہو گا کیونکہ پاکستان کے پاس عمدہ دفاعی نظام موجود ہے۔ماہرین کو اس بارے میں بھی شک و شبہات ہیں کہ بھارت غیرروایتی مزاحمت کی صلاحیت رکھتا ہے یا نہیں۔ دفاعی تجزیہ کار اجے شکلا نے کہا ہے کہ مودی حکومت کے کا مسئلہ یہ ہے کہ اس نے پاکستان کے خلاف بیان بازی کو تو بہت بڑھا دیا ہے لیکن فوج کی صلاحیتوں اور منصوبہ بندی کے نظام کو بہتر نہیں کیا۔

پشاورلاہور( اے این این ،کرائم رپورٹر) پشاو رموٹروے پرپاک فضائیہ کی جانب سے جنگی طیاروں کی ہنگامی لینڈنگ اورٹیک آف کی مشقیں جاری ہیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق پاک فضائیہ نے گزشتہ دنوں ہنگامی حالات سے نمٹنے کے لیے بڑے پیمانے پرمشقوں کا فیصلہ کیا تھا جس کے تحت پہلے مرحلے پرپاک فضائیہ کے جنگی طیارے اسلام آباد پشاورموٹروے پر ہنگامی لینڈنگ اورٹیک آف کی مشقیں کررہے ہیں، جس کی وجہ سے موٹروے کوہرقسم کی گاڑیوں کے لیے بند کردیا گیا ہے۔دوسری طرف پاکستان ایئر فورس کے شاہین موٹر وے پر جنگی مشقیں کرنے کے لئے پہنچ گئے ہیں اور سرگودھا ایئر بیس سے نیوکلیر وار ہیڈ سے لیس ایف سولہ طیاروں کا فارورڈ اٹیکنگ اسکوارڈن کامرہ ایئر بیس پہنچ گیا ہے ۔اٹک ، کامرہ،لاہور اور شیخوپورہ کے آس پاس موٹر وے کا انتظام پاکستان ایئر فورس نے سنبھال لیا ہے ۔موٹر وے ون اسلام آباد سے پشاور اور موٹر وے ٹو لاہور سے شیخوپور ہ آج جنگی مشقوں کی وجہ سے بند رہے گی ۔موٹر وے ذرائع کے مطابق پاک فضائیہ کے شاہین موٹروے پر اپنی مہارت دکھائیں گے۔ برہان سے صوابی انٹر چینج تک موٹروے کو بند کر دیا گیا ہے۔ کالا شاہ کاکو سے شیخوپورہ سیکشن آج صبح پانچ سے شام سات بجے بند رہے گا۔ کنارے پر لگے درخت کاٹ دئیے گئے ہیں جبکہ درمیان میں رکھے بلاک ہٹا دیئے گئے ہیں۔ موٹر وے پر کل پاک فضائیہ کے فائٹر طیاروں کی لینڈنگ اور ٹیک آف ٹیسٹنگ کی جائے گی۔ پاک فضائیہ کی مشقوں کے دوران سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔ موٹر وے کی تعمیر کے دوران اس بات کا خیال رکھا گیا تھا کہ ضرورت پڑنے پر اس سے رن وے کا کام بھی لیا جا سکتا ہے اس لئے اب پاکستان ائیر فورس کے شاہین موٹروے پر جنگی مشقیں کررہے ہیں۔بھارت کے جنگی جنون اور اشتعال انگیزیوں کے بعد پاک فوج نے موٹر وے پر جنگی طیاروں کی لینڈنگ کے انتظامات مکمل کر لئے ہیں ۔ذرائع کے مطابق لاہور کے نواحی علاقہ کالا شاہ کاکو سے شیخو پورہ تک موٹر وے کی دو لائنوں کے درمیان موجود دیواریں ہٹائی گئی ہیں اور روایتی ٹریفک کے لئے لگائی گئی سفید اور پیلی لائن ختم کر کے رن وے کا نشان بنا دیا گیا ہے ۔تقریبا 15کلو میٹر طویل موٹر وے پر ہر طرح کے جہاں ٹیک آف اور لینڈنگ کر سکتے ہیں ۔ذرائع کے مطابق اس علاقہ میں پاک فوج کے اہلکاروں کی نقل و حرکت پچھلے دو دنوں سے دیکھنے میں آ رہی ہے ۔موٹر وے پر یہ مشقیں پہلی دفعہ نہیں ،ہنگامی حالات میں روٹین کی کارروائی ہے ۔موٹر وے ذرائع نے اس بارے میں خبر کی تصدیق کی ہے جبکہ موٹر وے کے ترجمان کے مطابق موٹر وے پولیس نے ایک میٹنگ کے بعد یہ فیصلہ کیا ہے کہ بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب موٹر وے کو عام ٹریفک کے لئے بند کر دیا جائے گا ۔

مزید : صفحہ اول


loading...