پی آئی اے ہیڈ آفس کی اسلام آباد منتقلی سے عوام میں بے چینی پائی جاتی ہے،وزیر اعظم منتقلی کا عمل روکنے کا حکم دیں:مصطفی کمال

پی آئی اے ہیڈ آفس کی اسلام آباد منتقلی سے عوام میں بے چینی پائی جاتی ہے،وزیر ...
پی آئی اے ہیڈ آفس کی اسلام آباد منتقلی سے عوام میں بے چینی پائی جاتی ہے،وزیر اعظم منتقلی کا عمل روکنے کا حکم دیں:مصطفی کمال

  


کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)وفاقی کابینہ کی جانب سے پی آئی اے کا ہیڈ آفس اسلام آباد منتقلی کے فیصلے کی منظوری کی میڈیا اطلاعات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے چئیرمین پاک سرزمین پارٹی سید مصطفی کمال نے کہا ہے کہ اس فیصلے سے کراچی کی عوام میں شدید بے چینی پائی جاتی ہے,کراچی جو پہلے ہی احساس محرومی کا شکار اور بنیادی سہولیات سے محروم ہے وہاں حکومت کی جانب سے اس طرح کے اقدامات پاکستان کی معاشی شہ رگ کو زک پہنچانے کے مترادف ہے، کراچی پاکستان کو سوا تین ہزار ارب کما کر دیتا ہے، اس کے باوجود بھی کراچی کو سہولیات فراہم کرنے کے بجائے الٹا ان سے دور کی جارہی ہیں۔

پی آئی اے ملازمین کے وفد سے گفتگو کر تے ہوئےپاک سر زمین پارٹی کے چئیر مین مصطفی کمال کا کہنا تھا کہپہلے ہی 18ویں ترمیم کے تحت صوبوں کو ملنے والے اختیارات وزیر اعلیٰ نے اپنے ہی پاس رکھ لئے ہیں جو نچلی سطح تک منتقل نہیں ہورہے، اٹھارہویں ترمیم میں بھی ترمیم کی ضرورت ہے، حکومت قومی سوچ کا مظاہرہ کرے، پی آئی اے کا دفتر کراچی سے اسلام آباد منتقل کرنا اس بات کی عکاسی کر تا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت کو کراچی کی تعمیر و ترقی سے کوئی دلچسپی نہیں ہے،آرٹیکل 149 نفاذ کرنے کی باتیں کرنے والے کراچی میں جو کچھ بچ گیا ہے اس کو بھی چھیننے کی کوشش کررہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پاک سرزمین پارٹی پی آئی اے ہیڈ کوارٹر کی اسلام آباد منتقلی کی ہر فورم پر مخالفت کرے گی اور اس ضمن میں پی آئی اے کی تمام مزدور یونینز کی مکمل حمایت کریں گے ۔انہوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوری طور پر پی آئی اے ہیڈ افس کے منتقلی کے عمل کو روکیں کیونکہ پی آئی اے کا دفتر اسلام آباد منقل کرنا کسی صورت بھی ملک کے مفاد میں نہیں،ملک دشمن عناصر اس منتقلی کو غلط رنگ دے کر عوامی جذبات سے کھیل سکتے ہیں. انہوں نے کہاکہ ماضی میں جن جن اداروں کے ہیڈ کوارٹرز کو اسلام آباد منتقل کئے گئے، ان سے بھی کوئی فائدہ نہیں ہوا۔

مزید : علاقائی /سندھ /کراچی


loading...