جاوید اختر انصاری کے ڈیرے پر حملہ‘ ملزم  کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھجوانے کا حکم

 جاوید اختر انصاری کے ڈیرے پر حملہ‘ ملزم  کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھجوانے ...

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر) جوڈیشل مجسٹریٹ ملتان نے معاون خصوصی وزیر اعلی پنجاب کے ڈیرے پر فائرنگ کرنے کے مقدمہ میں ملوث ملزم کے جسمانی ریمانڈ کی (بقیہ نمبر42صفحہ 7پر)

استدعا مسترد کرتے ہوئے جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھجوانے کا حکم دیا ہے جبکہ انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نمبر 2 ملتان کے جج مسعود ارشد نے 6 ملزمان کی عبوری ضمانتوں کی درخواستیں مقدمہ سے انسداد دہشت گردی کی دفعات ختم ہونے کی بنیاد پر داخل دفتر کردی ہیں۔ اس موقع پر ملزمان عدالت پیش نہیں ہوئے جس پر درخواست بھی خارج کردی گئی ہے۔ قبل ازیں علاقہ مجسٹریٹ کی عدالت میں پولیس تھانہ شاہ رکن عالم نے ملزم محمد اشرف کا جسمانی ریمانڈ حاصل کرنے کی استدعا کی تھی جو مسترد کردی گئی۔ دوسری جانب انسداد دہشت گردی عدالت میں پولیس تھانہ شاہ رکن عالم کے مطابق بہرام خان نے درخواست دی کہ وہ ایم پی اے و معاون خصوصی حاجی جاوید اختر انصاری کے پاس بطور ملازم ڈیوٹی کرتا ہے۔ یکم ستمبر کی رات انکی رہائشگاہ پر موجود تھا کہ حلقہ کے معززین ان سے ملنے کی غرض سے آئے اسی اثنا میں ملزمان آصف عرف اچھا ڈان،شہزاد عرف یاڈی، نثار، امجد عرف بھولا، شاہد، اسد،جنید اور سلمان سمیت دیگر نامعلوم افراد کے ہمراہ مسلح آگئے جنہوں نے کہا کہ آج یہاں سے کوئی بھی بچ کے نہیں جائے گا۔ کوٹھی کو گھیرے میں لیکر اندھا دھند فائرنگ شروع کردی،کوٹھی کے اندر موجود لوگوں نے بھاگ کر اپنی جان بچائی اور کوٹھی کے دروازوں پر فائر لگے اور ملزمان دہشت پھیلاتے ہوئے اسلحہ لہراتے فرار ہوگئے، فائرنگ کی وجہ سے علاقہ میں خوف و ہراس پھیل گیا اور ٹریفک جام ہوگئی، وجہ عناد یہ ہے کہ ایم پی اے جاوید اختر ان بھتہ خوروں اور ریکارڈ یافتہ ملزمان کی سرپرستی نہیں کرتے اسی رنج کی بنیاد پر ملزمان نے باہمی صلاح مشورہ ہوکر خوف پھیلانے کے لئے فائرنگ کی تھی جس پر پولیس نے ملزمان کے خلاف دہشت گردی اور اقدام قتل ودیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا۔ ضمانت کی درخواست دینے والوں میں ملزمان شاہد، اسد، ناصر، شہزاد، جنید اور سلمان شامل تھے۔

حکم

مزید :

ملتان صفحہ آخر -