اور تو تم سے کیا نہیں ہوتا | بے خود دہلوی |

اور تو تم سے کیا نہیں ہوتا | بے خود دہلوی |
اور تو تم سے کیا نہیں ہوتا | بے خود دہلوی |

  

اور تو تم سے کیا نہیں ہوتا

ایک وعدہ وفا نہیں ہوتا

آپ لائے ہیں ہم پیام اپنا

دوسرے سے ادانہیں ہوتا

میری قسمت کو کیوں برا کہیے

آپ چاہیں تو کیا نہیں ہوتا

وہ خفا ہو گیا تو ہو جائے

بت کسی کا خدا نہیں ہوتا

ہم سے دل کھول کر ملا کیجیے

شرم میں کچھ مزا نہیں ہوتا

بات سنے میں کیا قباحت ہے

ہر سخن مدعا نہیں ہوتا

تلخ تر ہیں رقیب کی باتیں

زہر اتنا برا نہیں ہوتا

درد سے آشنا نہ ہو جب تک

آدمی کام کا نہیں ہوتا

کچھ ادا ، کچھ حجاب، کچھ شوخی

نیچی نظروں میں کیا نہیں ہوتا

دل محبت سے بھر گیا بے خود

اب کسی پر فدا نہیں ہوتا

شاعر: بے خود دہلوی

(شعری مجموعہ: اسرارِ بے خود، سالِ اشاعت،1980 )

Aor    To    Tum    Say    Kaya   Nahen    Hota

Aik  Waada   Wafaa    Nahen   Hota

Aap    Laaey    Hen    Ham   Payaam   Apna

Doosray   Say   Adaa   Nahen    Hota

Meri   Qismat    Ko   Kiun   Bura   Kahiay

Aap   Nay   Chaaha   To   Kaya   Nahen    Hota

Wo   Khafa   Ho   Gaya   To   Ho   Jaaey

Butt   Kisi   Ka   Khudda   Nahen    Hota

Ham   Say   Dil   Khol   Kar   Mila   Kijiay

Sharm   Men   Kuch   Mazaa   Nahen    Hota

Baat   Sunnay   Men    Kaya   Qabaahat   Hay

Har   Sukhan   Mudaa   Nahen    Hota

Talkh   Tar    Hen   Raqeeb   Ki   Baaten

Zehr   Itna   Buraa   Nahen    Hota

Dard   Say   Aashnaa   Na   Ho   Jab   Tak

Aadmi   Kaam   Ka   Nahen     Hota

Kuch   Adaa  ,  Kuch   Hijaab  ,  Khuch   Shokhi

Neechi   Nazron   Men   Kaya   Nahen    Hota

Dil   Muhabbat   Say   Bhar   Gaya   BEKHUD

Ab   Kisi   Par   Fidaa   Nahen    Hota

Poet: Bekhud    Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -