ہو رہے گا مری قسمت میں جو ہونا ہوگا | بے خود دہلوی |

ہو رہے گا مری قسمت میں جو ہونا ہوگا | بے خود دہلوی |
ہو رہے گا مری قسمت میں جو ہونا ہوگا | بے خود دہلوی |

  

کیا بتاؤں تمہیں میں حشر کے دن کیا نہیں ہوتا

ہو رہے گا مری قسمت میں جو ہونا ہوگا

اس نے مے پی ہے مرے ہوش اُڑے جاتے ہیں

کیا خبر تھی مجھے یوں نشہ دوبالا ہو گا

دل تو لیتے ہو مگر یہ بھی رہے یاد تمہیں

جو ہمارا نہ ہوا کب وہ تمہارا ہوگا

اپنی تصویر تم اپنے مقابل رکھ دو

میں اُسے چاہوں گا دونوں میں جو اچھا ہوگا

میں جو کہتا ہوں کہ بے خود ہے تمہارا شیدا

منہ بنا کر وہ یہ کہہ دیتے ہیں ہوگا ، ہوگا

شاعر: بے خود دہلوی

(شعری مجموعہ: اسرارِ بے خود، سالِ اشاعت،1980 )

Kaya     Bataaun   Tumhen   Main   Hashr   K   Din   Kaya  Ho   Ga

Ho   Rahay   Ga   Miri   Qismat   Men   Jo   Hona  Ho   Ga

Uss  Nay   May   Pi   Hay   Miray   Hosh   Urray  Jaatay   Hen

Kaya   Khabar   Thi    Mujhay   Yun    Nashha    Dobaala   Ho   Ga

Dil   To   Laitay   Ho   Magar   Yeh   Bhi   Rahay   Yaad   Tumhen

Jo   Hamaara   Na   Hua   Kab   Wo   Tumhaara    Ho   Ga

Apni   Tasveer   Bhi   Tum  Apnay   Muqaabil   Rakh   Lo

Main   Usay   Chaahun   Ga   Dono   Men   Jo   Acha   Ho   Ga

Main   Jo   Kehta   Hun   Keh   BEKHUD   Hay   Tumhaara   Shaida

Munh   Banaa   Kar   Wo   Yeh   Kehtay   Hen   Ho   Ga , Ho   Ga

Poet: Bekhud    Dehlvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -