یہ جو چہروں پہ لئے گرد الم آتے ہیں  | بیدل حیدری |

یہ جو چہروں پہ لئے گرد الم آتے ہیں  | بیدل حیدری |

  

یہ جو چہروں پہ لئے گرد الم آتے ہیں 

یہ تمہارے ہی پشیمان کرم آتے ہیں

اتنا کھل کر بھی نہ رو جسم کی بستی کو بچا 

بارشیں کم ہوں تو سیلاب بھی کم آتے ہیں 

تو سنا تیری مسافت کی کہانی کیا ہے 

میرے رستے میں تو ہر گام پہ خم آتے ہیں 

خول چہروں پہ چڑھانے نہیں آتے ہم کو 

گاؤں کے لوگ ہیں ہم شہر میں کم آتے ہیں 

وہ تو بیدلؔ کوئی سوکھا ہوا پتا ہوگا 

تیرے آنگن میں کہاں ان کے قدم آتے ہیں 

شاعر: بیدل حیدری

(شعری مجموعہ:پشت پہ گھر  )

Yeh   Jo   Chehron   Pe   Liay   Gard -e- Alam   Aatay    Hen

Yeh   Tumhaaray   Hi   Pashemaan-e- Karam   Aatay    Hen

Itna   Khul   Kar   Bhi   Na   Ro   Jism   Ki   Basti   Ko   Bachaa

Baarshen   Kam   Hon   To   Selaab   Bhi   Kam   Aatay   Hen

Tu   Sunaa  , Teri   Musaafat   Ki    Kahaani   Kaya   Hay

Meri   Raahon   Men   To   Har   Gaam   Pe   Kham   Aatay   Hen

Zulmat-e-Shab   K   Makeen    Apnay   Dareechay   Kholen

Ham   Uthaaey   Huay   Sooraj   Ka   Alam   Aatay    Hen

Khaol   Chehron   Pe   Charrhaanay   Nahen   Aatay   Ham   Ko

Gaaon   K   Log   Hen   Ham   Shehr   Bhi   Kam   Aatay    Hen

Wo   To   BEDIL   Koi   Sookha   Hua   Patta   Ho  Ga

Teray   Aangan   Men   Kahan   Un   K   Qadam   Aatay    Hen

Poet: Bedil   Haidri

مزید :

شاعری -غمگین شاعری -