ترا بیمار اچھا ہو رہا ہے | بیدل حیدری |

ترا بیمار اچھا ہو رہا ہے | بیدل حیدری |
ترا بیمار اچھا ہو رہا ہے | بیدل حیدری |

  

ترا بیمار اچھا ہو رہا ہے

یہ پہلی بار ایسا ہو رہا ہے

اچانک دل جو پسپا ہو رہا ہے

کہیں سے چھپ کے حملہ ہو رہا ہے

تری تصویر اُتاری جا رہی ہے

ترے پیکر کا چربہ ہو رہا ہے

ترے جانے سے ہر شے میں کمی ہے

بس اِک صدمہ زیادہ ہو رہا ہے

دل اشکوں میں کھرل ہو گا ابھی تو

ابھی تو ریزہ ریزہ ہو رہا ہے

ہم اور فاقے اکٹھے ہیں ابھی تک

ابھی تک تو گزارا ہو رہا ہے

چلو   لکھ آئیں کوئی حرف ہم بھی

ادبِ دیوارِ کعبہ ہو رہا ہے

قدم اگلی صدی میں رکھ رہے ہیں

سفر پچھلی صدی کا ہو رہا ہے

اُتار اُس جامۂ ہستی کو بیدلؔ

یہ پیراہن پُرانا ہو رہا ہے

شاعر: بیدل حیدری

(شعری مجموعہ:پشت پہ گھر  )

Tira    Bemaar    Achha   Ho     Raha   Hay

Yeh   Pehli   Baar   Aisa   Ho   Raha   Hay

Achaanak   Dil   Jo   Paspaa   Ho   Raha   Hay

Kahen   Say   Chhup   K   Hamla   Ho   Raha   Hay

Tiri   Tasveer   Utaari   Ja   Rahi   Hay

Tiray   Paikar   Ka   Charba   Ho   Raha   Hay

Tiray   Jaanay   Say   Har   Shay   Men   Kami   Hay

Bass   Ik   Sadma   Ziyaada   Ho   Raha   Hay

Dil   Ashkon   Men   Kharall   Ho   Ga   Abhi  To

Abhi   To   Reza   Reza   Ho   Raha   Hay

Ham   Aor   Faqqay   Akathay   Hen   Abhi   Tak

Abhi   Tak   To   Guzaara   Ho   Rah   Hay

Chalo   Likh   Aaen   Koi   Harf   Ham   Bhi

Adab -e- Dewaar-e- Kaaba   Ho    Raha   Hay

Qadam   Agli  Sadi   Men   Rakh   Rahay   Hen

Safar   Pichli   Sadi    Ka   Ho   Raha   Hay

Utaar   Uss   Jaam -e- Hasti   Ko   BEDIL

Yeh   Pairhan    Puraan   Ho   Raha   Hay

Poet: Bedil    Haidri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -