آرمی چیف سے ملاقات کے حوالے سے شہبازشریف نے بھی خاموشی توڑ دی 

آرمی چیف سے ملاقات کے حوالے سے شہبازشریف نے بھی خاموشی توڑ دی 
آرمی چیف سے ملاقات کے حوالے سے شہبازشریف نے بھی خاموشی توڑ دی 

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن ) اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس سے قبل پارلیمانی لیڈرز کی آرمی چیف اور ڈی جی آئی ایس آئی کے ساتھ ملاقات ہوئی جس کی بازگشت میڈیا کے تمام پلیٹ فارمز پر سنائی دے رہی ہے تاہم اب اپوزیشن لیڈر شہبازشریف بھی اس پر بول پڑے ہیں ۔

تفصیلات کے مطابق اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے عسکری قیادت سے ہونے والی ملاقات کا احوال بیان کرتے ہوئے کہا کہ اس میٹنگ میں تمام پارلیمانی لیڈرز موجود تھے ، اے پی سی سے پہلے آرمی چیف سے ملاقات ہوئی ہے ، میں اس میٹنگ میں موجود تھا ، میٹنگ کے دوران گلگت بلتستان کے معاملے پر بات چیت ہوئی ، میٹنگ کی خبر پبلک ہو گئی ہے تو میں ا س سے انکار نہیں کرتا ۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کو دبانے کی کوشش کی جارہی ہے ، میں اندر ہوں یا پھر باہر ، آل پارٹیز کانفرنس کے فیصلوں پر عملدرآمد ہو گا۔

اس سے قبل 

نجی ٹی وی ایکسپریس نیوز کے مطابق آرمی چیف، ڈی جی آئی ایس آئی اور پارلیمانی رہنماؤں کے مابین گزشتہ ہفتے ملاقات ہوئی جس میں گلگت بلتستان کے انتظامی امور پر بات چیت کی گئی۔ملاقات میں گلگت بلتستان کو نیا صوبہ بنانے کی تجویز پر اتفاق کیا گیا۔ شرکا نے تجویز دی کہ گلگت بلتستان میں انتخابات کا یہ کام نئی اسمبلی پر چھوڑ دیا جائے اور نئی اسمبلی خود قرارداد پاس کرے گی۔

 ملاقات میں شریک ہونے والے مسلم لیگ (ن) کے وفد میں شہباز شریف، خواجہ آصف اور احسن اقبال شامل تھے۔ بلاول بھٹو زرداری اور شیری رحمان بھی وفد کے ہمراہ ملاقات میں موجود تھے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ گزشتہ دنوں گلگت بلتستان الیکشن کے حوالے سے اہم میٹنگ ہوئی جس میں قومی سلامتی کے اداروں نے سیاسی رہنماو¿ں پر واضح کردیا کہ فوج کو انتخابی عمل سے الگ رکھا جائے۔ 

قومی سلامتی سے وابستہ حکام نے اس عزم کو دہرایا کہ پاک فوج ملک میں امن و امان کے قیام کے لیے اپنے فرائض ماضی کی طرح ادا کرتی رہے گی لیکن انتخابی عمل، پولنگ، جیسے معاملات میں افواج پاکستان کو دور رکھا جائے اور سول امور اور معاملات کو سول انتظامیہ ہی سرانجام دے۔

 ذرائع کے مطابق ملاقات میں پارلیمانی رہنماو¿ں نے نیب کے حوالے سے خدشات کا اظہار کیا جس پر عسکری قیادت نے کہا کہ نیب کو خود بنایا اس میں ہمارا کوئی کردار نہیں۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -