میری تربت پہ ہے انگشت بداں کوئی | بیدم شاہ وارثی |

میری تربت پہ ہے انگشت بداں کوئی | بیدم شاہ وارثی |
میری تربت پہ ہے انگشت بداں کوئی | بیدم شاہ وارثی |

  

میری تربت پہ ہے انگشت بداں کوئی

خاک میں مجھ کو ملا کر ہے پشیماں کوئی

رشکِ عیسیٰ ہو کوئی فخرِ سلیماں کوئی

ہو کے دیکھے تو گدائے درِ جاناں کوئی

اب نہ وہ شورِ سلاسل ہے نہ آہوں کی صدا

لے گیا ساتھ ہی سب رونقِ زنداں کوئی

مشعل ِراہِ وفا ہے مرا ذرہ ذرہ

کیوں مری خاک پہ کرتا ہے چراغاں کوئی

اُن کے چہرے سے نقاب اٹھتے ہی دنیابدلی

کوئی دامن ہے سلامت نہ گریباں کوئی

پھر چلا کعبے سے میں دیر بتاں کو بیدم

نہ ہوا ہوگا مری طرح پشیماں کوئی

شاعر: بیدم شاہ وارثی

(دیوانِ بیدم: سالِ اشاعت،1935)

Meri   Turbat   Pe   Hay   Ingasht   Badaan   Koi

Khaak   Men   Mujh   Ko   Mila   Kar   Hay   Pashemaan   Koi

Rashk -e- EESA   Ho  Koi   Fakhr-e- SULEMAAN   Koi 

Ho   K   Dekhay   To   Gadaa -e- Dar-e- Janaan    Koi

Ab   Na   Wo   Shor-e- Salaasal   Hay   Na   Aahon   Ki   Sadaa 

Lay   Gaya   Saath  Hi   Sab   Raonaq-e- Zindaan   Koi

Mashal-e- Raah -e- Wafa   Hay   Mira   Zarra   Zarra 

Kiun   Miri   Khaak   Pe   Karta   Hay   Charaghaan   Koi

Un   K   Chehray   Say   Naqaab   Uthtay   Hi   Dunya   Badli

Koi   Daaman   Hay   Salaamat   Na   Garebaan   Koi

Phir   Chala    Kaabay   Say   Main   Dair   Butaan   Ko   BEDAM

Na   Hua   Ho   Ga   Mir   Tarah   Pashemaan   Koi

Poet: Bedam   Shah  Warsi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -