ہتھیلی پر لیے سر عشق کے دربار میں آیا | بیدم شاہ وارثی |

ہتھیلی پر لیے سر عشق کے دربار میں آیا | بیدم شاہ وارثی |
ہتھیلی پر لیے سر عشق کے دربار میں آیا | بیدم شاہ وارثی |

  

ہتھیلی پر لیے سر عشق کے دربار میں آیا

میں جس سرکار کا بندہ تھا اپس سرکار میں آیا

یہ کیفیت کہاں دیر و حرم کی سجدہ گاہوں میں

جو لطفِ جہبہ سائی آستانِ یار میں آیا

نشیمن ہے نہ گل ہیں نہ شاخِ آشیاں باقی

قفس سے چھوٹ کر ناحق ہی میں گلزار میں آیا

غمِ ناکامیِ قسمت کی دنیا سے شکایت کیا

وہی بہتر ہے جو بیدم مزاجِ یار میں آیا

شاعر: بیدم شاہ وارثی

(دیوانِ بیدم: سالِ اشاعت،1935)

Hatheli    Par   Liay   Sar   Eshq   K   Darbaar   Men   Aaya

Main   Jiss   Sarkaar   Ka   Banda   Tha   Uss   Sarkaar   Men   Aaya

Yeh   Kaifiyat   Kahan   Dair -o- Haram   Ki   Sajda   Gaahon   Men

Jo   Lutf   Johba   Saai   Aastaan -e- Yaar   Men    Aaya

Nashaiman   Hay   Na   Gull   Hen   Na   Shaakh-e- Ashiyaan   Baaqi

Qafass   Say   Chhoot   Kar   Nahaq    Hi   Main   Gulzaar   Men   Aaya

Gham-e- Nakaami -e- Qismat   Ki   Dunya   Say   Shikaayat   Kaya

Wahi   Behtay   Hay   Jo   BEDAM   Mizaaj-e- Yaar   Men   Aaya

Poet: Bedam  Shah   Warsi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -