طور والے تری تنویر لیے بیٹھے ہیں  | بیدم شاہ وارثی |

طور والے تری تنویر لیے بیٹھے ہیں  | بیدم شاہ وارثی |
طور والے تری تنویر لیے بیٹھے ہیں  | بیدم شاہ وارثی |

  

طور والے تری تنویر لیے بیٹھے ہیں 

ہم تجھی کو بتِ بے پیر لیے بیٹھے ہیں 

جگر و دل کی نہ پوچھو جگر و دل میرے 

نگہِ ناز کے دو تیر لیے بیٹھے ہیں 

ان کے گیسو دلِ عشاق پھنسانے کے لئے 

جا بجا حلقۂ زنجیر لیے بیٹھے ہیں 

اے تری شان کہ قطروں میں ہے دریا جاری 

ذرے خورشید کی تنویر لیے بیٹھے ہیں 

پھر وہ کیا چیز ہے جو دل میں اتر جاتی ہے 

تیغ پاس ان کے نہ وہ تیر لیے بیٹھے ہیں 

مئے عشرت سے بھرے جاتے ہیں اغیار کے جام 

ہم تہی کاسۂ تقدیر لیے بیٹھے ہیں 

کشور و عشق میں محتاج کہاں ہیں بیدمؔ 

قیس و فرہاد کی جاگیر لیے بیٹھے ہیں 

شاعر: بیدم شاہ وارثی

(دیوانِ بیدم: سالِ اشاعت،1935)

Toor   Waalay   Tiri   Tanveer   Liay   Baithay   Hen

Ham   Tujhi   Ko   But-e- Bay   Peer   Liay   Baithay   Hen

Jigar -o- Dil   Ki   Na   Poochho   Jigar -o- Dil Men

Nogah-e- Naaz   K   Do   Teer   Liay   Baithay   Hen

Un   K   Gaisoo   Dil-e- Ushhaaq   Phnasaanay   K   Liay

J a  Bajaa   Halqa-e -Zanjeer   Liay   Baithay   Hen

Ay   Tiri   Shaan   Keh   Qatrron   Men   Hay   Draya   Jaari

Zarray   Khursheed   Ki    Tanveer   Liay   Baithay   Hen

Phir   Wo   Kaya   Cheez   Hay   Jo   Dil   Men   Utar   Jaati   Hay

Taigh   Paas   Un   K   Na   Wo   Zanjeer   Liay    Baithay   Hen

May-e- Eshrat   Say   Bharay   Jaatay   Hen   Aghyaar   K   Jaam

Ham   Tahi   Kaasa -e- Taqdeer   Liay   Baithay   Hen

Kishwar-o- Eshq   Men   Mohtaaj   Kahan   Hen   BEDAM

Qais -o- Farhaad   Ki   Jageer    Liay   Baithay   Hen

Poet: Bedam   Shah   Warsi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -