ساتھ دے کون ترے عشق میں وحشت کے سوا | بیدم شاہ وارثی |

ساتھ دے کون ترے عشق میں وحشت کے سوا | بیدم شاہ وارثی |
ساتھ دے کون ترے عشق میں وحشت کے سوا | بیدم شاہ وارثی |

  

ساتھ دے کون ترے عشق میں وحشت کے سوا

کوئی ٹہرے تو کہاں  گنجِ ملامت کے سوا

یہی تقویٰ ہے یہی زہد ، یہی حسنِ عمل

کوئی سرمایہ نہیں تیری محبت کے سو ا

بے خبر بھی ہوں میں اس حسن سے خود رفتہ بھی

اور عالم بھی ہے اک عالمِ حیرت کے سوا 

عرصۂ حشر میں ہے شور کہ  وہ آتے ہیں 

یہ تو اک اور قیامت  ہے قیامت کے سوا 

اس قدر مشقِ تصوّر ہو میری آنکھوں کو

کہ نظر آئے نہ کچھ یار کی صورت کے سوا 

رنج و غم یاس و قلق حسرت و حرمان و الم

سب گوارہ ہیں مجھے اِک تری فرقت کے سوا

شیخ کی باتوں میں بیدم میرا جی کیا بہلے

اس کو آتا نہیں کچھ دوزخ و  جنت کے سوا

شاعر: بیدم شاہ وارثی

(دیوانِ بیدم: سالِ اشاعت،1935)

Saath   Day   Kon   Tiray   Eshq   Men   Wehshat   K  Siwa

Koi   Thehray   To   Kahan   Ganj-e- Mulaamat   K  Siwa

Yahi   Taqwa    Hay   Yahi   Zohd   Yahi   Husn-e- Amal

Koi   Sarmaaya   Nahen   Teri   Muhabbat   K  Siwa

Bekhar   Bhi   Hun   Main   Uss   Husn   Say   Khud   Rafta   Bhi

Aor   Aalam   Bhi   Hay   Ik Aalam  -e- Hairat    K    Siwa

Arsa -e- Hshr   Men   Hay   Shor    Keh   Wo   Aatay   Hen

Yeh   To   Ik   Aor   Qayaamat   Hay  Qayaamat   K    Siwa

Iss   Qadar   Mashq-e-Tasawwar   Ho   Miri   Aankhon   Ko

Keh    Nazar Aaey   Na   Kuch   Yaar    Ki Soorat   K   Siwa

Ranj- o- Gham    Yaas -o- Qalaq    Hasrat -o- Harmaan -o- Alam

Sab    Gawaara    Hay   Mujhay   Ik   Tiri   Furqat   K   Siwa

Shaikh   Ki   Baaton   Men    BEDAM   Mira    Ji   Kaya    Behlay

Uss   Ko   Aata    Nehen    Kuch    Dozakh -o- Jannat   K   Siwa

Poet: Bedam   Shah   Warsi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -