اٹھا لیتا ہے اپنی ایڑیاں جب ساتھ چلتا ہے  | تنویر سپرا |

اٹھا لیتا ہے اپنی ایڑیاں جب ساتھ چلتا ہے  | تنویر سپرا |
اٹھا لیتا ہے اپنی ایڑیاں جب ساتھ چلتا ہے  | تنویر سپرا |

  

اٹھا لیتا ہے اپنی ایڑیاں جب ساتھ چلتا ہے 

وہ بونا کس قدر میرے قد و قامت سے جلتا ہے 

کبھی اپنے وسائل سے نہ بڑھ کر خواہشیں پا لوں 

وہ پودا ٹوٹ جاتا ہے جو لا محدود پھلتا ہے 

مسافت میں نہیں حاجت اسے چھتنار   پیڑوں کی 

بیاباں کی دہکتی گود میں جو شخص پلتا ہے 

میں اپنے بچپنے میں چھو نہ پایا جن کھلونوں کو 

انہی کے واسطے اب میرا بیٹا بھی مچلتا ہے 

مری مجبوریاں دیکھو اسے بھی معتبر سمجھوں 

جو ہر تقریر میں اپنا لب و لہجہ بدلتا ہے 

بدن کے ساتھ میری روح بھی سپراؔ   کتھک ناچے 

غزل سانچے میں جب کوئی نیا مضمون ڈھلتا ہے 

شاعر: تنویر سپرا

(شعری مجموعہ:لفظ کھردرے سالِ اشاعت،1980)

Uthaa   Leta   Hay  Apni    Erriyaan   Jab    Saath    Chlata   Hay

Wo   Bona   Kiss    Qadar   Miray   Qad-o- Qaamat   Say   Jalta   Hay

Kabhi   Apnay    Wasaail   Say   Barrh   Kar   Khaahishen   Paalo

Wo   Paoda   Toot   Jaata   Hay   Jo   Lamehdood   Phalta   Hay

Musaafat   Men   Nahen   Haajat   Usay   Chhatnaar   Pairron   Ki

Bayabaan   Ki    Dahakti   God    Men   Jo   Shakhs   Palta   Hay

Main   Apnay   Bachpanay   Men   Choo   Na   Paaya   Jin    Khilonon   Ko

Unhi    K    Waastay    Ab   Mera    Beta    Bhi    Machalta   Hay

Miri    Majbooriyaan    Dekho   Usay   Bhi   Motabar   Samjhun

Jo   Har   Taqreer   Men   Apa    Lab-o- Lehja   Badalta   Hay

Badan   K   Saath    Meri   Rooh   Bhi   SIPRA    Kathak    Naachay

Ghazal   Saanchay   Men   Jab   Koi   Naya   Mazmoon   Dhalta   Hay

Poet: Tanveer  Sipra

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -