چھت کی کڑیاں جانچ لے دیوار و در کو دیکھ لے  | تنویر سپرا |

چھت کی کڑیاں جانچ لے دیوار و در کو دیکھ لے  | تنویر سپرا |
چھت کی کڑیاں جانچ لے دیوار و در کو دیکھ لے  | تنویر سپرا |

  

چھت کی کڑیاں جانچ لے دیوار و در کو دیکھ لے 

مجھ کو اپنانے سے پہلے میرے گھر کو دیکھ لے 

چند لمحوں کا نہیں یہ عمر بھر کا ہے سفر 

راہ کی پڑتال کر لے راہبر کو دیکھ لے 

اپنی چادر کی طوالت دیکھ کر پاؤں پسار 

بوجھ سر پر لادنے سے قبل سر کو دیکھ لے 

عزم آثارِ قدیمہ میں سکونت کا نہ کر

صرف سیلانی نگاہوں سے کھنڈر کو دیکھ لے

رہ نہیں سکتا کوئی خالق ضدا تخلیق سے

آئینےے کے عکس میں آئینہ گر کو دیکھ لے

 ایک حرکت سے بدل جاتا ہے لفظوں کا مزاج 

اپنی ہر تحریر میں زیر و زبر کو دیکھ لے 

جانبِ بازار پتھر پھینکنے سے پیشتر 

تو کسی سپراؔ   نما شوریدہ سر کو دیکھ لے 

شاعر: تنویر سپرا

(شعری مجموعہ:لفظ کھردرے سالِ اشاعت،1980)

Chhat   Ki   Karriyaan   Jaanch   Lay   Dewaar -o-Dar   Ko    Dekh   Lay

Mujh   Ko   Apnaanay   Say   Pehlay   Meray   Ghar   Ko   Dekh   Lay

Chand   Lamhon   Ka   Nahen   Yeh   Umr   Bhar   Ka   Hay   Safar

Raah   Ki   Parrtaal   Kar   Lay   Raahbar   Ko     Dekh   Lay

Apni   Chaadar   Ki   Tawaalat   Dekh   Kar   Paaon   Pasaar

Bojh   Sar   Pe   Laadnay   Say   Qabl   Sar   Ko   Dekh   Lay

Azm    Asaar-e- Qadeema   Men   Sakoonat   Ka   Na   Kar

Sirf   Selaani   Nigaahon   Say   Khandar   Ko   Dekh   Lay

Reh   Nahen   Sakta   Koi   Khaaliq   Juda   Takhleeq   Say

Aainay   K   Aks   Men   Aaina   Gar   Ko   Dekh   Lay

Aik   Harkat   Say   Badal   Jaata   Hay   lafzon   Ka   Mizaaj

Apni   Har   Tehreer   Men    Zer -o- Zabar   Ko   Dekh   Lay

Jaanib -e- Bazaar   Pathar   Phainkanay   Say   Paishtar

Tu   Kisi   SIPRA   Numa   Shoreeda   Sar   Ko   Dekh   Lay

Poet: Tanveer   Sipra

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -