بیٹے کو سزا دے کے عجب حال ہوا ہے  | تنویر سپرا |

بیٹے کو سزا دے کے عجب حال ہوا ہے  | تنویر سپرا |
بیٹے کو سزا دے کے عجب حال ہوا ہے  | تنویر سپرا |

  

بیٹے کو سزا دے کے عجب حال ہوا ہے 

دل پہروں مرا کرب کے دوزخ میں جلا ہے 

عورت کو سمجھتا تھا جو مردوں کا کھلونا 

اس شخص کو داماد بھی ویسا ہی ملا ہے 

ہر اہل ہوس جیب میں بھر لایا ہے پتھر 

ہمسائے کی بیری پہ ابھی بور پڑا ہے 

اب تک مرے اعصاب پہ محنت ہے مسلط 

اب تک مرے کانوں میں مشینوں کی صدا ہے 

اے رات مجھے ماں کی طرح گود میں لے لے 

دن بھر کی مشقت سے بدن ٹوٹ رہا ہے 

شاید میں غلط دور میں اُترا ہوں زمیں پر 

ہر شخص تحیر سے مجھے دیکھ رہا ہے 

شاعر: تنویر سپرا

(شعری مجموعہ:لفظ کھردرے سالِ اشاعت،1980)

Betay   Ko   Saza   Day   K   Ajab   Haal   Hua  Hay

Dil   Pehron   Mira   Karb   K   Dozakh   Men   Jala   Hay

Aorat   Ko   Samajhta   Tha   Jo   Mardon   Ka  Khilaona

Uss   Shakhs   Ko   Damaad   Bhi   Wesa   Hi   Mila   Hay

Har   Ehl-e- Hawas   Jaib   Men   Bhar   Laaya   Hay   Pathar

Hamsaaey   Ki   Bairi   Pe   Abhi   Boor   Parra   Hay

Ab   Tak   Miray   Asaab   Pe   Mehnat   Hay   Musallat

Ab   Tak   Miray   Kaanon   Men   Masheenon   Ki    Sadaa   Hay

Ay   Raat   Mujhay   Maan   Ki   Tarah   Gode   Men   Lay   Lay

Din   Bhar   Ki   Mushaqqat   Say   Badan   Toot   Rah   Hay

Shayad   Men   Ghalat   Daor   Men   Utra   Hun   Zameen   Par

Har   Shakhs   Tahayyur   Say   Mujhay   Dekh   Raha   Hay

Atraaf   Men   Ba   Resh   Bazugon   Ka   Hay   Pehra

Aor   Beech   Men   Sehma   Hua   TANVEER   Kharra   Hay

Poet: Tanveer   Sipra

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -