تیرا چپ رہنا مرے ذہن میں کیا بیٹھ گیا  | تہذیب حافی |

تیرا چپ رہنا مرے ذہن میں کیا بیٹھ گیا  | تہذیب حافی |
تیرا چپ رہنا مرے ذہن میں کیا بیٹھ گیا  | تہذیب حافی |

  

تیرا چپ رہنا مرے ذہن میں کیا بیٹھ گیا 

اتنی آوازیں تجھے دیں کہ گلا بیٹھ گیا 

یوں نہیں ہے کہ فقط میں ہی اسے چاہتا ہوں 

جو بھی اس پیڑ کی چھاؤں میں گیا بیٹھ گیا 

اتنا میٹھا تھا وہ غصے بھرا لہجہ مت پوچھ 

اس نے جس جس کو بھی جانے کا کہا بیٹھ گیا 

اپنا لڑنا بھی محبت ہے تمہیں علم نہیں 

چیختی تم رہی اور میرا گلا بیٹھ گیا 

اس کی مرضی وہ جسے پاس بٹھا لے اپنے 

اس پہ کیا لڑنا فلاں میری جگہ بیٹھ گیا 

بزم جاناں میں نشستیں نہیں ہوتیں مخصوص 

جو بھی اک بار جہاں بیٹھ گیا بیٹھ گیا 

شاعر: تہذیب حافی

(تہذیب حافی کی وال سے)

Tera   Chup   Rehna   Miray   Zehn  Men   Kaya   Baith   Gaya

Itni   Awaazen   Tujhay   Deen   Keh   Glaa   Baith   Gaya

Yun   Nahen   Hay   Keh   Faqat   Main   Hi   Usay   Chaahat  Hun

  Jo   Bhi   Uss   Pairr   Ki   Chhaaon   Men   Gaya   Baith   Gaya

Itna   Meetha   Tha   Wo   Ghussay   Bhara   Lehja   Mat   Poochh

Uss   Nay   Jiss   Jiss   Ko   Bhi   Jaanay   Ka   Kaha    Baith   Gaya

Apna   Larrna   Bhi   Hay   Muhabbat   Tumhen   Elm   Nahen

Chhekhti   Tum   Rahi   Aor   Mera   Galaa   Baith    Gaya

Uss   Ki   Marzi   Wo    Jisay   Paas   Bithaa   Lay   Apnay

Iss    Pe    Kaya   Larrna   Keh   Falaan   Meri    Jagah   Baith   Gaya

Bazm-e- Janaan Men Nashisten Nahen Hoten Makhsoos

Jo   Bhi   Ik   Baar   Jahan  Baith   Gaya   Baith   Gaya

Poet: Tehzeeb   Hafi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -