بتا اے اَبر مساوات کیوں نہیں کرتا   | تہذیب حافی |

بتا اے اَبر مساوات کیوں نہیں کرتا   | تہذیب حافی |
بتا اے اَبر مساوات کیوں نہیں کرتا   | تہذیب حافی |

  

بتا اے اَبر مساوات کیوں نہیں کرتا 

ہمارے گاؤں میں برسات کیوں نہیں کرتا 

محاذِ عشق سے کب کون بچ کے نکلا ہے 

تو بچ گیا ہے تو خیرات کیوں نہیں کرتا 

وہ جس کی چھاؤں میں پچیس سال گزرے ہیں 

وہ پیڑ مجھ سے کوئی بات کیوں نہیں کرتا 

میں جس کے ساتھ کئی دن گزار آیا ہوں 

وہ میرے ساتھ بسر رات کیوں نہیں کرتا 

مجھے تو جان سے بڑھ کر عزیز ہو گیا ہے 

تو میرے ساتھ کوئی ہاتھ کیوں نہیں کرتا 

شاعر: تہذیب حافی

(تہذیب حافی کی وال سے)

Bataa   Ay   Abr   Musawaat   Kiun   Nahen   Karta

Hamaaray   Gaaon   Men   Barsaat   Kiun   Nahen   Karta

Mahaaz -e- Eshq   Say   Kab   Kon   Bach   K  Nikla   Hay

Tu   Bach   Gaya   Hay To   Khairaat   Kiun   Nahen   Karta

Wo   Jiss   Ki   Chaaon   Men   Paccheez   Saal   Guzray  Hen

Wo   Pairr   Mujh   Say   Koi   Baat   Kiun   Nahen   Karta

Main   Jiss   K   Saath   Kai   Din   Guzaar   Aaaya   Hun

Meray   Saath   Basar   Raat   Kiun   Nahen   Karta

Mujhay  To   Jaan   Say   Barhh   Kar   Aziz   Ho   Gaya  Hay

Tu    Meray   Saath   Koi   Haath    Kiun   Nahen   Karta

Poet: Tehzeeb   Hafi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -