پرائی آگ پہ روٹی نہیں بناؤں گا | تہذیب حافی |

پرائی آگ پہ روٹی نہیں بناؤں گا | تہذیب حافی |
پرائی آگ پہ روٹی نہیں بناؤں گا | تہذیب حافی |

  

پرائی آگ پہ روٹی نہیں بناؤں گا

میں بھیگ جاؤں گا ، چھتری نہیں بناؤں گا

اگر خدا نے بنانے کا اختیار دیا

علم بناؤں گا ، برچھی نہیں بناؤں گا

فریب دے کے ترا جسم جیت لوں لیکن

میں پیڑ کاٹ کے کشتی نہیں بناؤں گا

گلی سے کوئی بھی گزرے تو چونک اٹھتا ہوں

نئے مکان میں کھڑکی نہیں بناؤں گا

میں دشمنوں سے اگر جنگ جیت بھی جاؤں

تو اُن کی عورتیں قیدی نہیں بناؤں گا

تمہیں پتا تو چلے بے زبان چیز کا دکھ

میں اب چراغ کی لو ہی نہیں بناؤں گا

میں ایک فلم بناؤں گا اپنے ثروت پر

اور اُس میں ریل کی پٹری نہیں بناؤں گا 

شاعر: تہذیب حافی

(تہذیب حافی کی وال سے)

Paraai   Aag   Pe   Rotti   Nahen   Nanaaun   Ga

Main   Bheeg    Jaaun  Ga  ,   Chhatri    Nahen   Nanaaun   Ga

Agar   Khuda   Nay   Banaanay    Ka   Ikhtiyaar   Diya

Alam    Banaaun   Ga   Barchhi   Nahen   Nanaaun   Ga

Faraib   Day    K   Tira    Jism   Jeet   Lun   Lekin

Main    Pairr   Kaat   K   Kashti    Nahen   Nanaaun   Ga

Gali  Say   Koi   Bhi   Guzray   To   Chaonk   Uthta   Hun

Naey   Makaan   Men   Khirrki    Nahen   Nanaaun   Ga

Main    Dushmanon   Say   Agar   Jang   Jeet    Bhi    Jaaun

To   Un   Ki   Aorten   Qaidi  Nahen   Nanaaun   Ga

Tumhen   Pta   To   Chalay   Be   Zubaan   Cheez   Ka   Dukh

Main   Ab   Charaagh   Ki   Lao   Hi   Nahen   Nanaaun   Ga

Main   Aik   Film   Banaaun   Ga   Apnay   SARWAT   Par

Aor   Uss   Men   Rail   Ki   Patrri  Nahen   Nanaaun   Ga

Poet: Tehzeb   Hafi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -