عالمی یوم امن کے موقع پر کشمیر دنیا کی سب سے بڑی جیل بن گیا: بلاول بھٹو زرداری 

  عالمی یوم امن کے موقع پر کشمیر دنیا کی سب سے بڑی جیل بن گیا: بلاول بھٹو ...

  

   اسلام آباد(آن لائن)چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے طالبان کی حکومت کو تسلیم کرنے سے متعلق وزیراعظم عمران خان کے بیان کو خوش آئند قرار د یتے ہوئے کہا ہے  کہ  میری تجویز ہے  اس معاملے پر وزیراعظم پارلیمان میں بھی بحث کرائیں، خطے کا امن افغانستان سے جڑا ہوا ہے،افغانستان سے متعلق فیصلہ افغان عوام کو کرنا ہے، عالمی برادری افغانستان کی مدد کرے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بی بی سی ورلڈ کو دئیے گئے انٹرویو میں کیا۔بلاول بھٹو نے کہا   افغانستان سے صحافیوں کی جانب سے شکایات آرہی ہیں اور خواتین اپنے حقوق کے لئے احتجاج کر رہی ہیں۔ ہمیں اس بات پر فکر ہے کہ بچیوں کو سکول نہیں جانے دیا جا رہا۔ اگر طالبان خودکو بین الاقوامی برادری سے تسلیم کرنا چاہتے ہیں تو افغانستان کی نئی حکومت کو بین الاقوامی توقعات پر پورا اترنا ہوگا اور ایسا کرنے کے لئے ہمیں ان کی حوصلہ افزائی کرنا ہوگی۔ چیئرمین پی پی پی نے کہا کہ افغانستان میں جیسے ہی صورتحال تبدیل ہوئی تو پاکستان پیپلزپارٹی نے حکومت سے کہا کہ وہ پارلیمان کا سیشن بلائے۔ ہم ملک میں دیگر امور کی طرح اس مسئلے پر بھی کوئی اتفاق رائے پیدا نہیں کر سکے۔ ہمیں ضرورت اس بات کی ہے کہ پارلیمنٹ کی مرضی اور منشا کے مطابق خارجہ پالیسی بنائی جائے نہ کہ کسی فرد واحد کی۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے چیئرمین بلاول بھٹو نے کہا کہ اس بات پر اکثر مبالغہ آرائی کی جاتی ہے کہ پاکستان کا افغانستان پر بہت اثر ہے لیکن پاکستان کو چاہیے کہ افغانستان میں ایک وسیع البنیاد حکومت کے لئے اپنا کردار ادا کرے۔ اس کے ساتھ ساتھ خواتین اور بچوں کی حفاظت بھی یقینی بنانی چاہیے۔ ہمیں بین الاقوامی برادری کے ساتھ مل کر اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ افغانستان کی سرزمین سے علاقے میں دہشتگردی کو فروغ نہیں دیا جا سکے۔  اس سوال کے جواب میں کہ کہتے ہیں کہ پاکستان میں سویلین حکومت بہت کم اثرانداز ہوتی ہے، چیئرمین بلاول بھٹو نے کہا کہ یہ درست ہے کہ پاکستان میں جمہوریت کے لئے فضا کم ہوتی جا رہی ہے اور خاص طور پر عمران خان کی حکومت کے دور میں۔ ہمیں یہ جگہ واپس لینے کے لئے ملک کے جمہوری لوگوں کو چاہیے کہ اپنے سیاسی نظام میں ایک فعال کردار ادا کریں اور اس کے لئے پارلیمنٹ اور میڈیا کو استعمال کیا جائے۔ افغانستان میں مختلف ایجنسیوں کے کردار پر تاریخ بات کرے گی۔ ایسا لگتا ہے کہ ہر ایک دوسرے پر الزام لگا رہا ہے لیکن ضروری ہے کہ ہم سب مل کر اس خطے کی خاطر مثبت نتیجے کے لئے کام کریں۔ افغانستان کی خواتین اور نوجوانوں کے لئے بے انتہا مواقع ہیں لیکن یہ بات تشویشناک ہے کہ یہ مواقع خطرے میں ہیں۔   پاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ آج عالمی یوم امن کے موقع پر مقبوضہ کشمیر دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا ہوا ہے۔اگر دنیا کو امن کا گہوارہ بنانا ہے تو اقوام متحدہ کیلئے مسئلہ کشمیر کا حل ایک ٹیسٹ کیس ہے۔عالمی یوم امن پر اپنے بیان میں بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ عالمی یوم امن کے موقع پر آج مقبوضہ کشمیر کے عوام بدترین بھارتی جارحیت کا سامنا کررہے ہیں۔عالمی یوم امن مناتے ہوئے اقوام متحدہ کے رکن ممالک غور کریں کہ مقبوضہ کشمیر میں قیام امن کیلئے حقِ خودارادیت کی قرارداد کا کیا ہوا۔انہوں نے کہا کہ آج عالمی یوم امن کے موقع پر مقبوضہ کشمیر دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا ہوا ہے۔اگر دنیا کو امن کا گہوارہ بنانا ہے تو اقوام متحدہ کیلئے مسئلہ کشمیر کا حل ایک ٹیسٹ کیس ہے۔مشرق وسطی سے وسطی ایشیا تک دنیا کو قیام امن کے حوالے سے بڑے چیلنجز درپیش ہیں جن کا مشترکہ کاوشوں سے حل نکالنا ہوگا۔

بلاول بھٹو 

مزید :

صفحہ اول -