قائداعظم ہاؤس کی کوئی چیز بیچی نہیں جارہی،بیرسٹر مرتضی وہاب

  قائداعظم ہاؤس کی کوئی چیز بیچی نہیں جارہی،بیرسٹر مرتضی وہاب

  

کراچی (سٹاف رپورٹر)ایڈمنسٹریٹر کراچی مرتضی وہاب نے واضح کرتے ہوئے کہا ہے کہ قائد اعظم ہاس کی کوئی چیز بیچی نہیں جا رہی۔ انہوں نے کہا کہ سفارکی پارک اور چڑیا گھر کے معاملات دیکھ رہا ہوں۔ سفاری پارک اور کراچی زو کے ایم سی کے بڑے اثاثے ہیں۔کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب میں ایڈمنسٹریٹر کراچی مرتضی وہاب نے کہا کہ کے ایم سی عباسی اسپتال کو نہیں چلا سکتی۔ چاہتا ہوں کہ حکومت سندھ عباسی اسپتال میں مداخلت کرے، یا پھر پبلک پرائیوٹ سیکٹر کے ساتھ عباسی اسپتال کو چلایا جائے۔ کراچی کی ٹوٹی سڑکوں کے ذکر پر انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی رہنما اور ایم این اے عامر لیاقت حسین نے جہانگیر روڈ پر کام کرایا، تاہم پی ڈبلیو ڈی نے لیپا پوتی کر کے جہانگیر روڈ بنایا۔ سڑک تو بنادی گئی تھی لیکن سیوریج سسٹم کو ٹھیک نہیں کیا گیا۔ کے ایم سی سڑک اور واٹر بورڈ سیوریج کی بہتری پر کام کر رہی ہے۔ سیوریج کا کام مکمل ہونے کے بعد کارپیٹنگ کی جائے گی۔ایڈمنسٹریٹر نے کہا کہ جہانگیر روڈ کے باسیوں کو گٹر کے پانی میں نہیں رہنے دیں گے۔ مانتا ہوں شہر کی سڑکوں کا حال بہت برا ہے۔ کوئی بھی سڑک بنانے جائیں گے تو پہلے ٹینڈر ہوگا۔ کے ایم سی اور ڈی ایم سی کے پاس 5کروڑ روپے تعمیراتی کام کے ہونگے۔ بارش کے بعد جہانگیر روڈ پر سڑک ڈالی جائے گی۔ 4 سڑکوں کا پی سی ون تیار کر کے سندھ حکومت کو بھیج دیا ہے۔مردم شماری کے حوالے سے بات کرتے ہوئے مرتضی وہاب نے کہا کہ مردم شماری پر سندھ حکومت کا مقف پہلے دن سے ایک ہی ہے۔ سندھ میں مردم شماری درست نہیں ہوئی۔ سندھ حکومت کے نمائندے کے طور پر الیکشن کمیشن کے سامنے پیش ہوا تھا۔ٹیکس سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ ریاست کو چلانے کیلئے ٹیکس عائد کیا جاتا ہے۔ کے ایم سی ٹیکس جمع نہیں کرے گی تو معاملات کیسے چلیں گے۔ کوئی نیا انڈر پاس، فلائی اوور، پارکس کیلئے پیسہ کہاں سے آئے گا۔ وفاق سے پیسہ مانگوں یا سندھ حکومت سے؟۔ وفاقی وزرا آتے ہیں اور باتیں کرکے چلے جاتے ہیں۔ کے ایم سی کو ہم خیرات پر چلائیں گے یا اپنے وسائل پر؟۔ امید ہے کہ ٹیکس سے متعلق جواب جلد ملے گا۔ فیو میگیشن کیلئے ہدایات جاری کردی ہیں،جلد اسے شروع کرا دیں گے۔ 

بیرسٹر مرتضی وہاب

مزید :

صفحہ اول -