فضائی سفر کے دوران اپنے موبائل فونز کو ایروپلین موڈ پر رکھنا کیوں ضروری ہوتا ہے؟ آسٹریلوی ماہر نے تنبیہ کردی

فضائی سفر کے دوران اپنے موبائل فونز کو ایروپلین موڈ پر رکھنا کیوں ضروری ہوتا ...
فضائی سفر کے دوران اپنے موبائل فونز کو ایروپلین موڈ پر رکھنا کیوں ضروری ہوتا ہے؟ آسٹریلوی ماہر نے تنبیہ کردی

  

کنبرا(مانیٹرنگ ڈیسک) موبائل فونز کے سگنلز فضائی سفر کے دوران ہوائی جہاز میں سگنلز کے ساتھ مل کر گڑ بڑ کا سبب بنتے ہیں جس کی وجہ سے مسافروں کو موبائل فونز بند یا ایروپلین موڈ پر رکھنے کی تلقین کی جاتی ہے۔ حالیہ عرصے میں کئی ماہرین کی طرف سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ اب ٹیکنالوجی بہت ترقی کر گئی ہے لہٰذا ہوائی جہاز میں فونز کو ایروپلین موڈ پر کرنے یا بند کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہوتی۔ تاہم ایک آسٹریلوی ماہر نے ان ماہرین کے دعوے کی تردید کرتے ہوئے اس حوالے سے متنبہ کر دیا ہے۔

دی سن کے مطابق سی کیو یونیورسٹی آسٹریلیا میں شعبہ ایوی ایشن کے سربراہ ڈوگ ڈروری کا کہنا ہے کہ موبائل فونز، ہوائی جہازوں اور کنٹرول ٹاورز کے سگنلز کی فریکوئنسی کو ایک دوسرے سے الگ کرنے پر بہت کام ہو چکا ہے لیکن اب بھی موبائل فونز کو ہوائی جہاز میں آن رکھنا خطرے سے خالی نہیں ہے۔ ذاتی الیکٹرانک ڈیوائسز(موبائل فونز، ٹیبلیٹ وغیرہ) اب بھی ایسے سگنلز چھوڑ سکتی ہیں جو طیارے کے کمیونی کیشن اور نیوی گیشن سسٹمز میں برقی مقناطیسی مداخلت کا سبب بن سکتے ہیں اور یہ مداخلت کسی بھی تباہ کن حادثے کو جنم دے سکتی ہے۔ لہٰذا خطرہ کم ہو جانے کے باوجود فضائی سفر کے دوران موبائل فونز اور دیگر ایسی ڈیوائسز کو بند رکھنا یا فلائٹ موڈ/ایروپلین موڈ پر رکھنا ہی بہتر آپشن ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -