’’حوثیوں کو اسلحہ نہ دو ‘‘ امریکہ کا ایران کو پیغام نواز شریف اور جنرل راحیل شریف یمن تنازع پر بات چیت کیلئے آج سعودی عرب پہنچیں گے

’’حوثیوں کو اسلحہ نہ دو ‘‘ امریکہ کا ایران کو پیغام نواز شریف اور جنرل ...

واشنگٹن(اظہرزمان،بیوروچیف)امریکی صدر بارک اوبامہ نے واضح کیا ہے کہ یمن کے قریب سمندر میں امریکی بحری جہازوں کی حرکت کا مقصد ناکہ بندی کرنا نہیں بلکہ ناکہ بندی روکنا ہے۔ امریکی ٹی وی چینل ’’ایم ایس این بی سی ‘‘ کے اینکر کرس میتھیوز کے ساتھ ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ ہم سمندر کو کلیئر رکھنا چاہتے ہیں اور اس کے ساتھ ساتھ ایران کو یہ واضح پیغام دینا چاہتے ہیں کہ وہ یمنی باغیوں کو اسلحہ سپلائی کرنے سے باز رہے۔ صدر اوبامہ کا کہنا تھا کہ ایران کے ملوث ہونے سے یمنی تنازعے کو حل کرنے کی کوششوں میں پیچیدگی پیدا ہوگی جہاں حوثی نامی شیعہ قبائل اورسرکاری فوج میں ملک کا کنٹرول سنبھالنے کے لئے کئی ماہ سے جنگ جاری ہے۔ اس دوران پینٹاگون کے ترجمان نے بتایا ہے کہ اس وقت بحیرہ عرب میں دو امریکی بحری جہاز پہنچ چکے ہیں جن کی آمد کا مقصد وہاں سکیورٹی کی صورتحال کو خراب ہونے سے بچانا ہے۔ ایک طیارہ یو ایس ایس تھیوڈر روز ویلٹ ہے اور دوسرا یو ایس ایس نار منڈی ہے جس پر گائیڈڈکروزمیزائل نصب ہیں۔ ترجمان نے ایرانی اسلحے کی سپلائی روکنے کا ذکر نہیں کیا تاہم یہ ضرار واضح کیا کہ امریکی بحری جہازوں کی نقل و حرکت ایک واضح مشن کے تحت ہو رہی ہے کہ بحری راستوں کو کھلا رکھا جائے اور جہازوں کوآزادی کے ساتھ گزرنے کا موقع مل سکے۔ 19اپریل کو امریکی نیول فورس سنٹرل کمانڈر نے ایک پریس ریلیز میں بتایا تھا کہ خلیج عرب میں اپنے سٹیشن سے چل کر دو بحری جہاز آبنائے ہرمز میں پہنچ گئے ہیں۔یادرہے کہ جنوری میں حوثی قبائل نے صنعا کے صدارتی محل پر قبضہ کرلیا تھا جس کے بعد صدر عبدالرب منصورہادی مستعفی ہو کر عدن پہنچ گئے تھے جس کے نتیجے میں دار الحکومت پر باغیوں کاقبضہ ہو گیا تھا ۔ پینٹا گون ترجمان کرنل وارن کاکہنا ہے کہ پینٹاگون کی ایران کے نوکارگو بحری جہازوں کے بیڑے پر گہری نظر ہے جو خلیج عدن کے بین الاقوامی سمندرمیں موجودہے۔ اطلاعات کے مطابق یہ جہاز حوثی قبائل کو اسلحہ پہنچانا چاہتے ہیں۔ترجمان کا کہنا ہے کہ ایرانی جہازوں نے ابھی تک یہ واضح نہیں کیا کہ وہ آئندہ کیاکرنا چاہتے ہیں۔

اسلام آباد (خصو صی رپورٹ) یمن کی صورتحال پر بات چیت کرنے کے لئے وزیر اعظم نواز شریف اور آرمی چیف جنرل راحیل شریف کے ہمراہ اعلی سطح کا وفد آج سعودی عرب جائے گا۔وزیر اعظم آفس کے ترجمان کے مطابق نواز شریف کی صدارت میں اعلی سطح کا اجلاس ہوا۔ جس میں وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف، وزیر خزانہ اسحاق ڈار، آرمی چیف جنرل راحیل شریف، وزیر اعظم کے خصوصی معاون طارق فاطمی اور سیکرٹری خارجہ اعزاز چوہدری نے شرکت کی۔ وزیر اعظم نے یمن میں فضائی آپریشن بند کرنے اور معاملہ کو سیاسی بات چیت سے حل کرنے کے فیصلے کو سراہا۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ وزیر اعظم ایک روزہ دورے پر آ ج سعودی عرب جائیں گے اور سعودی قیادت اور عوام سے اظہار یکجہتی کرنے کے ساتھ ساتھ یمن کی صورتحال پر تبادلہ خیال بھی کریں گے۔ وزیر اعظم

مزید : صفحہ اول